Friday, 11 May 2012

Pin It

Widgets

Juda Honey K Sadmay Ko


 Hans K Sehna

جدا ہونے کے صدمے کو
اگرچہ ہنس کے سہنا تھا
اسے رسمی ہی سہی لیکن
خدا حافظ تو کہنا تھا

زبان میں اتنی طاقت تھی
لیکن صحرا کی وحشت تھی
میری بچپن سے عادت تھی
مجھے خاموش رہنا تھا

وہ کچا گھر وہ بارش میں
ہماری جاگتی آنکھیں
ہمیں جاتی ہوئی برکھا سے
کچھ بہ کچھ تو کہنا تھا

ہم رسم وفا اس سے
نبھاتے بھی کہاں تک
ہمارے خواب کے گھر تھے
  ..... ہمیں تو ان میں ہی رہنا تھا



Juda Honay K Sadmey Ko
Agarchey Hans K Sehna Tha
Usay Rasmi Hi Sahi Lekin
Khuda Hafiz Tou  Kehna  Tha,

Zuban Mein Itni Taqat Thi
Magar Sehra Ki Wehshat Mein
Meri Bachpan Say Aadat Thi
Mujhe Khamosh Rehna Tha,

Woh Kacha Ghar Woh Barish Mein
Hamari Bheegti Ankhen
Hame Jati Hui Barkha Say
Kuch Ba Kuch Tou Kehna Tha,

Hum  Rasm-e-Wafa  Us Say
Nibhatay  Bhi  Kahan  Tak 
Hamare Khuwab K Ghar Thay
Hame Tou Un Mein Rehna Tha .....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.