Saturday, 11 August 2012

Pin It

Widgets

Yeh Mast Mast Be Misaal Ankhen..

Mast Be-Misaal Aankeh


 
یہ مست مست بے مثال آنکھیں
نشے سے ہر دم نڈھال آنکھیں

اٹھیں تو ھوش و حواس چھینیں
گریں تو کر دیں کمال آنکھیں

کوئی ہے ان کے کرم کا طالب
کسی کا شوق وصال آنکھیں

نہ یوں جلائیں نہ یوں ستائیں
کریں تو کچھ یہ خیال آنکھیں

ہیں جینے کا بہانہ یارو
یہ روح پرور جمال آنکھیں

دراز پلکیں غزال آنکھیں
مصوّری کا کمال آنکھیں

شراب رب نے حرام کر دی
مگر رکھی ہیں حلال آنکھیں

ہزاروں ان سے قتل ہوئے ہیں
خدا کے بندے سنبھال آنکھیں


Yeh Mast Mast Be Misaal Aankhen
 Nashay Men Har Dam Nidhaal Aankhen,

Uthen Tou Hosh-o-Hawaas Cheenay
Giren Tou Kar Den Kamal Aankhen,

Koi Hay In K Karam Ka Talib
Kisi Ka Shoq-e-Wisaal Aankhen,

Na Youn Jalen , Na Youn Sataen
Karen Tou Kuch Yeh Kahayl Aankhen,

Hain Jeenay Ka Ik Bahana Yaaro
Yeh Rooh Parwar Jamaal Aankhen,

Daraaz Palken , Wisaal Aankhen
Musawari Ka Kamal Aankhen,

Sharaab Rab Ne Haraam Kardi
Magar Kiun Rakhi Halaal Aankhen,

Hazaron In Se Qatal Hongay
Khuda K Banday Sanbhaal Aankhen…







Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.