Monday, 28 January 2013

Pin It

Widgets

Ab Yeh Sochoon Tou Bhanwar اب یہ سوچوں تو بھنور




اب یہ سوچوں تو بھنور ذہن میں پڑ جاتے ہیں
کیسے چہرے ہیں جو ملتے ہی بچھڑ جاتے ہیں

کیوں تیرے درد کو دیں تہمتِ ویرانئ دل
زلزلوں میں تو بھرے شہر اُجڑ جاتے ہیں

موسمِ زرد میں ایک دل کو بچاؤں کیسے
ایسی رُت میں تو گھنے پیڑ بھی جھڑ جاتے ہیں

اب کوئی کیا میرے قدموں کے نِشاں ڈھونڈھے گا
تیز آندھی میں تو خیمے بھی اُکھڑ جاتے ہیں

شغلِ اربابِ ہنر پوچھتے کیا ہو کہ یہ لوگ
ّپتھروں میں بھی کبھی آئینے جڑ جاتے ہیں

سوچ کا آئینہ دھُندلا ہو تو پھر وقت کے ساتھ
چاند چہروں کے خدوخال بگڑ جاتے ہیں

شِدتِ غم میں بھی زندہ ہوں تو حیرت کیسی
کچھ دیے تُند ہواؤں میں بھی لڑ جاتے ہیں

وہ بھی کیا لوگ ہیں محسن جو وفا کی خاطر!
خود تراشیدہ اُصولوں پہ بھی اَڑ جاتے ہیں

Ab Yeh Sochoon Tou Bhanwar Zehan Mein Par Jatay Hain
Kaisay Chehray Hain Jo Milte He Bichar Jatay Hain

Kiun Tere Dard Ko Dien Tuhmat-E-Weerani-E-Dil?
Zalzalon Mein Tou Bharay Shehar Ujar Jatay Hain

Mousam-E-Durd Mein Ik Dil Ko Bachaoon Kaisay???
Aisi Rutt Men Tou Ghanay Pairr Bhi Jharr Jatay Hain

Kab Koi Kia Mere Qadmon K Nishaan Dhoonde Ga
Taiz Aandhi Mein Tou Khaimay Bhi Ukhar Jatay Hain

Shughl-e-Arbab-e-Hunar Poochty Kia Ho K yeh Log
Patharon Men Bhi Kabhi Aaeiny Jarr Jatay Hen

Soch Ka Aaina Dhundla Ho Tou Phir Waqt K Sath
Chand Chehron Ke Khad-O-Khaal Bigar Jatay Hain

Shiddat-E-Gham Mein Bhi Zinda Hoon Tou Hairat Kaisi???
Kuch Diye Tund Hawaoon Se Bhi Larde Jatay Hain

Wo Bhi Kia Log Hain “Mohsin” Jo Wafa Ki Khatir
Khud Tarasheeda Asoolon Pe Bhi Arr Jatay Hain…




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.