Sunday, 27 January 2013

Pin It

Widgets

Apni Mohabbaton Ki Khudaee اپنی محبتوں کی خدائی


اپنی محبتوں کی خدائی دیا نہ کر
ہر بے طلب کے ہاتھ کمائی دیا نہ کر

دیتی ہے جب ذرا سی بھی آہٹ اذیتیں
ایسی خموشیوں میں سنائی دیا نہ کر

پہلے ہی حادثات کے امکان کم نہیں
یوں مجھ کو راستوں میں سجھائی دیا نہ کر

نظریں پتھروں کو بھی کر جائیں پاش پاش
سج دھج کے بستیوں میں دکھائی دیا نہ کر

ان موسموں میں پنچھی پلٹتے نہیں سدا
دل کو اداسیوں میں رہائی دیا نہ کر

آتا نہیں بدلنا جو انداز دشمنی
چہرے بدل بدل کے دکھائی دیا نہ کر

فرحت کوئی تو فرق ہو عام اور خاص میں
ہر ایک آشنا کو رسائی دیا نہ کر.............
Apni Mohabbaton Ki Khudaee Diya Na Kar
Har Be-Talab K Hath Kamaee Diya Na Kar ,

Deti Hay Jab Zara Si Bhi Aahat Aziyatein
Aisi Khamoshiyon Men Sunaee Diya Na Kar ,

Pehle He Haadsat K Imkaan Kam Nahi
Yun Mujhko Raston Men Sujhaee Diya Na Kar ,

Nazren Tou Patharon Ko Bhi Kar Jaen Pash Pash
Saj Dhaj K Bastiyon Men Dikhaee Diya Na Kar ,

In Mosamon Men Panchi Palat’tay Nahi Sada
Dil Ko Udasiyon Men Rehaee Diya Na Kar ,

Aata Nahi Badalna Jo Andaz-E-Dushmani
Chehray Badal Badal K Dikhaee Diya Na Kar ,

Farhat Koi Tou Farq Ho Aam-O-Khaas Men
Har Aik Aashna Ko Rasaee Diya Na Kar….....




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.