Sunday, 6 January 2013

Pin It

Widgets

رات کا سمندر ہے.. رات بھی محبت کی

رات کا سمندر ہے
رات بھی محبت کی

بات کا اجالا ہے
بات بھی محبت کی

گھات کی ضرورت ہے
گھات بھی محبت کی

نرم گرم خاموشی
سہج سہج سرگوشی

چور چور دروازے
کون چھپ کے آیا ہے

آرزو نے جنگل میں
راستہ بنایا ہے

جھینپتے ہوئے آنگن
نے درخت سے مل کر

کچھ نہ کچھ چھپایا ہے
آسماں کی کھڑکی میں

سکھ بھری شرارت سے
چاند مسکرایا ہے

چاند مسکرایا ہے
چاندنی نہائی ہے

خوشبوؤں نے موسم میں
آگ سی لگائی ہے

عشق نے محبت کی
آنکھ چومنا چاہی

اور ہوا کے حلقے میں
شوخ سی نزاکت سے

شاخ کمسائی ہے
رات کا سمندر ہے

رات بھی محبت کی
بات کا اجالا ہے

رات بھی محبت کی
بات کے سویرے میں

زندگی کے گھیرے میں
روح ٹمٹمائی ہے

وصل جھلملایا ہے
دل نے بند سینے میں

حشر سا اٹھایا ہے  
کون چھپ کے آیا ہے..
 
 
 

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It.
 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.