Sunday, 6 January 2013

Pin It

Widgets

.............دل مسافر قبول کرلے ملا ہے جو کچھ جہاں جہاں سے

 
 
یہ سنگریزے عداوتوں کے وہ آبگینے سخاوتوں کے
دل مسافر قبول کرلے ملا ہے جو کچھ جہاں جہاں سے

بچھڑنے والے! بچھڑ چلا تھا تو نسبتیں بھی گنوا کے جاتا
تیرے لیے شہر بھر سےاب بھی میں زخم کھاوں زباں زباں سے

مری محبت کے واہموں سے پرے تھا تیرا وجود ورنہ
جہاں جہاں تیرا عکس ٹھہرا میں ہوکے آیا وہاں وہاں سے

تُو ہمسفر ہے نہ ہم نفس ہے کسے خبر ہے کہ تُو کدھر ہے
میں دستکیں دے کے پوچھ بیٹھا مکیں مکیں سے مکاں مکاں سے

ابھی محبتوں کا اسم ِ اعظم لبوں پہ رہنے دے جان ِ محسن   
ابھی ہے چاہت نئی نئی سی ابھی ہیں جذبے جواں جواں سے..
 
 
 
 
 
 
 
Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It
 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.