Thursday, 3 January 2013

Pin It

Widgets

____! کبھی بول بھی





!__
دلِ سوختہ
کبھی بول بھی


جو اسیر کہتے تھے خود کو تیری اداؤں کے وہ کہاں گئے
جو سفیر تھے تیر ی چاہتوں کی فضاؤں کے وہ کہاں گئے


...
وہ جو مُبتلائے سفر تھے تیرے خیال میں
وہ جو دعویدار تھے عمر بھی کی وفاؤں کے وہ کہاں گئے


کبھی کوئی راز تو کھول بھی
کبھی بول بھی
دلِ نا خدا
کبھی بول بھی


جو تیرے سفینۂ دارو غم کے سوار تھے
جو تیرے وظیفہ ء چشمِ نم پہ نثار تھے


وہ جو ساحلوں پہ اُ تر گئے تو پھر اُس کے بعد پلٹ کے آئے کبھی نہیں
تیری لہر لہر پہ جن کے نقش و نگار تھے


کسی دن ترازوئے وقت پر
اُنہیں تول بھی
کبھی بول بھی


وہ جو تیرے نغمۂ زیرو بم کے امین تھے
جو تیرے طفیل بلندیوں کے مکین تھے


و ہ جو معترف تھے تری نگاہِ نیاز کے
تمھیں جن پہ سو سو یقین تھے


وہ چکا گئے تیرا مول بھی
کبھی بول بھی


کبھی بول بھی، دلِ سوختہ، دلِ نا خدا، دلِ بے نوا، کبھی بول بھی...!!!










Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It.
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.