Sunday, 27 January 2013

Pin It

Widgets

Chaahat Ka Rang Tha Na چاہت کا رنگ تھا





چاہت کا رنگ تھا نہ وفا کی لکیر تھی
قاتل کے ہاتھ میں تو حنا کی لکیر تھی

خوش ہوں کہ وقت قتل مرا رنگ سرخ تھا
میرے لبوں پہ حرف دعا کی لکیر تھی

میں کارواں کی راہ سمجھتا رہا جسے
صحرا کی ریت پر وہ ہوا کی لکیر تھی

سورج کو جس نے شب کے اندھیروں میں گم کیا
موج شفق نہ تھی وہ قضا کی لکیر تھی

گزرا ہے سب کو دشت سے شاید وہ پردہ دار
ہر نقش پا کے ساتھ ردا کی لکیر تھی

کل اس کا خط ملا کہ صحیفہ وفا کا تھا
محسن ہر ایک سطر حیا کی لکیر تھی....

Chaahat Ka Rang Tha Na Wafa Ki Lakeer Thi
Qaatil K Haath Mein To Hina Ki Lakeer Thi

Khush Hoon K Waqt-E-Qatl Mera Rang Surkh Tha
Mere Labon Pe Harf-E-Dua Ki Lakeer Thi

Main Kaarvaan Ki Raah Samajhta Raha Jise
Sehra Ki Reit Par Wo Hawa Ki Lakeer Thi

Sooraj Ko Jisne Shab K Andheron Mein Gum Kia
Mauj-E-Shafaq Na Thi Wo Qaza Ki Lakeer Thi

Guzra Hai Shab Ko Dasht Se Shayad Wo Parda-Daar
Har Naqsh-E-Pa K Saath Rida Ki Lakeer Thi

Kal Uska Khat Mila K Saheefa Wafa Ka Tha
Mohsin Har Aik Satar Haya Ki Lakeer Thi….



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It




Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.