Sunday, 27 January 2013

Pin It

Widgets

Is Qadar Musalsal Thi اِس قدر مسلسل تھیں




اِس قدر مسلسل تھیں شدتیں جدائی کی
آج پہلی بار اس سے میں نے بے وفائی کی

ورنہ اب تلک یوں تھا خواہشوں کی بارش میں
یا تو ٹوٹ کر رویا یا غزل سرائی کی

تج دیا تھا کل جن کو ہم نے تیری چاہت میں
آج ان سے مجبوراً تازہ آشنائی کی

ہو چلا تھا جب مجھ کو اختلاف اپنے سے
تو نے کس گھڑی ظالم میری ہمنوائی کی

ترک کر چکے قاصد کوئے نا مراداں کو
کون اب خبر لاوے شہر آشنائی کی

طنز و طعنہ و تہمت سب ہنر ہیں ناصح کے
آپ سے کوئی پوچھے ہم نے کیا برائی کی

پھر قفس میں شور اٹھا قیدیوں کا اور صیاد
دیکھنا اڑا دیگا پھر خبر رہائی کی

دکھ ہوا جب اس در پر کل فراز کو دیکھا
لاکھ عیب تھے اس میں خو نہ تھی گدائی کی







Is Qadar Musalsal Thi Shiddatein Judayi Ki
Aaj Pheli Baar Us Se Mein Ne Bewafaayi Ki


Warna Ab Talak Yun Tha Khwahishon Ki Barish Mein
Ya Tou Toot Kar Roya Ya Ghazal Saraayi Ki


Taj Dia Tha Kal Jin Ko Ham Ne Teri Chaahat Mein
Aaj Un Se Majbooran Taaza Aashnaayi Ki


Ho Chala Tha Jab Mujh Ko Ikhtilaaf Apnay Se
Tu Ne Kis Gharri Zaalim Meri Hamnawaayi Ki ?


Tark Kar Chukay Qaasid Ko-e-Na-Muradaan Ko
Kon Ab Khabar Laaway Sheher-e-Aashnaayi Ki ?


Tanz-o-Taana-o-Tohmat Sab Hunar Hain Nasah K
Aap Se Koi Poochay Hum Ne Kia Buraayi Ki ?


Phir Qafas Mein Shor Utha Qaidyon Ka Aur Sayyaad
Dekhna Urra De Ga Phir Khabar Rihaayi Ki


Dukh Howa Jab Us Dar Pe Kal “Faraz” Ko Dekha
Laakh Aib Thay Os Mein Khuu Na Thi Gadaayi Ki…

           




                                                                                      

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.