Saturday, 12 January 2013

Pin It

Widgets

Lahoo Se Dil Kabhi.. لہو سے دل کبھی چہرے اجالنے کے لئے





لہو سے دل کبھی چہرے اجالنے کے لئے
میں جی رہا ہوں اندھیروں کو ٹالنے کےلئے

اتر پڑے ہیں پرندوں کے غول ساحل پر
سفر کا بوجھ سمندر میں ڈالنے کےلئے

سخن لباس پہ ٹھہرا تو جوگیوں نے کہا
کہ آستیں ہے فقط سانپ پالنے کےلئے

میں سوچتا ہوں کبھی میں بھی کوہکن ہوتا
   ترے وجود کو پتھر میں ڈھالنے کے لئے  

کسے خبر کہ شبوں کا وجود لازم ہے
فضا میں چاند ستارے اچھالنے کےلئے

بہا رہی تھی وہ سیلاب میں جہیز اپنا
بدن کی ڈوبتی کشتی سنبھالنے کےلئے

وہ ماہتاب صفت' آئینہ جبیں محسن
گلے ملا بھی تو مطلب نکالنے کے لئے....

 
Lahoo Se Dil Kabhi Chehre Ujaalny K Liye
Men Jee Raha Hon Andheron Ko Taalny K Liye ,

Utar Parey Hen Parindon K Ghoul Sahil Par
Safar K Bojh Samndar Men Dalney K Liye ,

Sukhan Libaas Pay thehra Tou Jogiyon Ne Kaha
K Aasteen Hay Faqat Saanp Paalney K Liye ,

Men Sochta Hon Kabhi Men Bhi Kohkan Hota
Tere Wujood Ko Pathar Men Dhaalny K Liye ,


Kisay Khabar K Shabon K Wujood Lazim Hay
Fiza Men Chaand Sitarey Uchaalny K Liye ,

Baha Rahi Thi Who Sailaab Men Zehar Apna
Badan Ki Doobti Kashti Uchaalny K Liye ,

Woh Mahtab-e-Sift, Aaeina Jabeen Mohsin
Galay Mila Bhi Tou Matlab Nikaalny K Liye…..




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.