Sunday, 27 January 2013

Pin It

Widgets

Tay Kar Na Saka Zeest K طے کر نہ سکا زیست کے




طے کر نہ سکا زیست کے زخموں کا سفر بھی
حالانکہ مِرا دِل تھا شگوفہ بھی شرر بھی

اُترا نہ گریباں میں مقدر کا ستارا
ہم لوگ لٹاتے رہے اشکوں کے گہر بھی

حق بات پہ کٹتی ہیں تو کٹنے دو زبانیں
جی لیں گے مِرے یار باندازِ دگر بھی

حیراں نہ ہو آئینہ کی تابندہ فضا پر
آ دیکھ ذرا زخمِ کفِ آئینہ گر بھی

سوکھے ہوئے پتوں کو اُڑانے کی ہوس میں
آندھی نے گِرائے کئی سر سبز شجر بھی

وہ آگ جو پھیلی میرے دامن کو جلا کر
اُس آگ نے پھونکا میرے احباب کا گھر بھی

محسنؔ یونہی بدنام ہوا شام کا ملبوس
حالانکہ لہو رنگ تھا دامانِ سحر بھی
Tay Kar Na Saka Zeest K Zakhmon Ka Safar Bhi
Halaan’K Mera Dil Tha Shagufa Bhi Sharar Bhi


Utra Na Garaibaan Main Muqddar Ka Sitara
Ham Log Lotatay Rahay Ashkoon Kay Gohar Bhi


Haq Bat Pay Katti Hain To Katney Do Zubanaein
Jee Leyn Gay Merey Yaar Bandaz-E-Digar Bhi


Heraan Na Ho Aaina Ki Tabinda Faza Par
Aa Dekh Zara Zakhm-E-Kaf-E-Aaina Gar Bhi


Sookhay Hoey Patton Ko Uranay Ki Hawas Main
Aandhi Nay Giraey Kaee Sirsabz Shajar Bhi


Woh Aagh Jo Pehli Merey Daman Ko Jalaa Kar
Us Aagh Nay Phoonka Merey Ahbaab Ka Ghar Bhi

Mphsin Yun He Badnaam Hua Sham Ka Malboos
Halaan’K Lahoo Rung Tha Damaan-E- Sehar Bhi…




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.