Sunday, 13 January 2013

Pin It

Widgets

Zikr-E-Shab-E-Firaaq Se ذکر شبِ فراق سے وحشت اسے بھی تھی


ذکر شبِ فراق سے وحشت اسے بھی تھی
میری طرح کسی سے محبت اسے بھی تھی

مجھ کو بھی شوق تھا نئے چہروں کی دید کا
رستہ بدل کے چلنے کی عادت اسے بھی تھی

اس رات دیر تک وہ رہا محوِ گفتگو
مصروف میں بھی کم تھا فراغت اسے بھی تھی

مجھ سے بچھڑ کے شہر میں‌ گل مل گیا وہ شخص
حالانکہ شہر بھر سے عداوت اسے بھی تھی

وہ مجھ سے بڑھ کے ضبط کا عادی تھا جی گیا
ورنہ ہر ایک سانس قیامت اسے بھی تھی

سنتا تھا وہ بھی سب سے پرانی کہانیاں
شاید رفاقتوں کی ضرورت اسے بھی تھی

تنہا ہوا سفر میں تو مجھ پر کھلا یہ بھید
سائے سے پیار دھوپ سے نفرت اسے بھی تھی

محسن میں اس سے کہہ نہ سکا یوں بھی حالِ دل
درپیش ایک تازہ مصیبت اسے بھی تھی.........

Zikr-E-Shab-E-Firaaq Se Vehshat Usay Bhi Thi
Meri Tarha Kisi Se Mohabbat Usay Bhi Thi ,

Mujh Ko Bhi Shoq Tha Naey Chehron Ki Deed Ka
Rasta Badal K Chalney Ki Aadat Usay Bhi Thi ,

Us Raat Dair Tak Wo Raha Mehv-E-Ghuftaghoo
Masroof Men Bhi Kam ,Tha Faraghat Usay Bhi Thi ,

Mujhse Bichar Kar Shehar Men,Ghul Mil Gaya Wo Shakhs
Halaan K Shehar Bhar Se Adawat Usay Bhi Thi ,

Sunta Tha Wo Bhi Sab Se Purani Kahaniyan
Taaza Rafaqaton Ki Zaroorat Usay Bhi Thi ,

Wo Mujh Se Barh K Zabt Ka Aadi Tha G Gaya
Warna Har Ak Saans Qayamat Usay Bhi,
 
Tanha Hua Safar Men Tou Mujh Par Khula Ye Bhaid
Saaey Se Piyar , Dhoop Se Nafrat Usay Bhi Thi ,

Mohsin Men Us Se Keh Na Saka Youn Bhi Haal-E-Dil
Darpaish Aik Taaza Musibat Usay Bhi Thi  ..........



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post & Share It
 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.