Monday, 25 February 2013

Pin It

Widgets

Aadhi Raat K Sapne آدھی رات کے شاید سپنے جھوٹے تھے


Aadhi Raat K Sapne

آدھی رات کے شاید سپنے جھوٹے تھے
یا پھر پہلی بار ستارے ٹوٹے تھے

جس دن گھر سے بھاگ کے شہر میں پہنچی تھی
بھاگ بھری کے بھاگ اُسی دن پھوٹے تھے

مذہب کی بنیاد پہ کیا تقسیم ہوئے
ہمسایوں نے ہمسائے ہی لوٹے تھے

شوخ نظر کی چٹکی نے نقصان کیا
ہاتھوں سے چائے کے برتن چھوٹے تھے

اوڑھ کے پھرتی تھی جو نیناں ساری رات
اُس ریشم کی شال پہ یاد کے بوٹے تھے



Aadhi Raat K Sapne Shayad Jhotey Thay
Ya Phir Pehli Baar Sitarey Totey Thay

Jis Din Ghar Se Bhaag K Sheher Mein Pohnchi Thi
Bhaag Bhari K Bhaag Usi Din Phoote Thay

Mazhab Ki Bunyaad Pe Kia Taqseem Huey
Hamsayon Ne Hamsaye He Lootey Thay

Shokh Nazar Ki Chutki Ne Nuqsaan Kiya
Haathon Se Chaey K Bertan Totey Thay

Orrh K Phirti Thi Jo Naina Saari Raat
Us Resham Ki Shaal Pay Yaad K Bootey Thay.....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.