Sunday, 3 February 2013

Pin It

Widgets

Aankhon Ka Rang آنکھوں کا رنگ، بات کا لہجہ بدل گیا


Chehra badal gaya

آنکھوں کا رنگ، بات کا لہجہ بدل گیا
وہ شخص ایک شام میں کتنا بدل گیا

کُچھ دن تو میرا عکس رہا آئینے پہ نقش
پھریوں ہُوا کہ خُود مِرا چہرا بدل گیا


جب اپنے اپنے حال پہ ہم تم نہ رہ سکے
تو کیا ہوا جو ہم سے زمانہ بدل گیا

قدموں تلے جو ریت بچھی تھی وہ چل پڑی
اُس نے چھڑایا ہاتھ تو صحرا بدل گیا


کوئی بھی چیز اپنی جگہ پر نہیں رہی
جاتے ہی ایک شخص کے کیا کیا بدل گیا!

اِک سر خوشی کی موج نے کیسا کیا کمال!
وہ بے نیاز، سارے کا سارا بدل گیا


اٹھ کر چلا گیا کوئی وقفے کے درمیاں
پردہ اُٹھا تو سارا تماشا بدل گیا

حیرت سے سارے لفظ اُسے دیکھتے رہے
باتوں میں اپنی بات کو کیسا بدل گیا


کہنے کو ایک صحن میں دیوار ہی بنی
گھر کی فضا، مکان کو نقشہ بدل گیا

شاید وفا کے کھیل سے اُکتا گیا تھا وہ
منزل کے پاس آکے جو رستہ بدل گیا


قائم کسی بھی حال پہ دُنیا نہیں رہی
تعبیرکھو گئی، کبھی سَپنا بدل گیا

منظر کا رنگ اصل میں سایا تھا رنگ کا
جس نے اُسے جدھر سے بھی دیکھا بدل گیا

اندر کے موسموں کی خبر اُس کی ہوگئی!
اُس نو بہارِ ناز کا چہرا بدل گیا

آنکھوں میں جتنے اشک تھے جگنو سے بن گئے
وہ مُسکرایا اور مری دُنیا بدل گیا

اپنی گلی میں اپنا ہی گھر ڈھو نڈتے ہیں لوگ
امجد یہ کو ن شہر کا نقشہ بدل گیا

Aankhon Ka Rang, Baat Ka Lehja Badal Gaya
Woh Shakhs Aik Shaam Main Kitna Badal Gaya

Kuch Din To Mera Aks Raha Aaine Pe Naqsh
Phir Youn Huwa Ke Khud Mera Chehra Badal Gaya

Jab Apnay Apnay Haal Pay Hum Tum Na Reh Sakay
To Kiya Huwa Jo Hum Say Zamana Badal Gaya

Qadmon Talay Jo Rait Bichhi Thi Woh Chal Pari
Us Nay Chhuraya Haath To Sehra Badal Gaya

Koi Bhi Cheez Apni Jageh Par Nahin Rahi
Jaatay Hi Aik Shakhs Kay, Kiya Kiya Badal Gaya

Ik Sarkhushi Ki Moj Nay Kaisa Kiya Kamal
Wo Bay-Niaaz Saara Ka Saara Badal Gaya

Uth Kar Chala Gaya Koi Waqfay K Darmiyaan
Parda Utha To Saara Tamasha Badal Gaya

Hairat Say Saaray Lafz Usay Dekhtay Rahay
Baaton Main Apni Baat Ko Kaisay Badal Gaya

Kehne Ko Ik Sehan Main Deewar Hi Bani
Ghar Ki Fiza Makaan Ka Naqsha Badal Gaya

Shayad Wafa K Khail Se Uktaa Gaya Tha Woh
Manzil Kay Paas Aake Jo Rusta Badal Gaya

Qayam Kisi Bhi Haal Pay Dunya Nahi Rahi
Taabeer Kho Gayee Kabhi Sapna Badal Gaya

Manzar Ka Rang Asal Main Saaya Tha Rang Ka
Jis Nay Usay Jidhar Say Bhi Dekha Badal Gaya

Andar Kay Mosamon Ki Khabar Us Ko Ho Gayee
Us No-Bahaar-E-Naaz Ka Chehra Badal Gaya

Aankhon Mein Jitna Ashk Thay Jugnoo Say Ban Gaye
Woh Muskuraya Or Meri Dunya Badal Gaya

Apni Gali Main Apna Hi Ghar Dhoondhtay Hain Log
Amjad Yeh Kon Shehr Ka Naqsha Badal Gaya..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.