Tuesday, 5 February 2013

Pin It

Widgets

Arz-e-Gahm Kabhi Us K عرضِ غم کبھی اس کے



Udhar Zamana Hai

عرضِ غم کبھی اس کے روبرو بھی ہو جائے
شاعری تو ہوتی ہے، گفتگو بھی ہو جائے

زخمِ ہجر بھرنے سے یاد تو نہیں جاتی
کچھ نشاں تو رہتے ہیں، دِل رفو بھی ہو جائے

رند ہیں بھرے بیٹھے اور مے کدہ خالی
کیا بنے جو ایسے میں ایک "ہُو" بھی ہو جائے

میں اِدھر تنِ تنہا اور اُدھر زمانہ ہے
وائے گر زمانے کے ساتھ تو بھی ہو جائے

پہلی نامرادی کا دکھ کہیں بسرتا ہے
بعد میں اگر کوئی سرخرو بھی ہو جائے

دین و دل تو کھو بیٹھے اب فرازؔ کیا غم ہے
کوئے یار میں غارت آبرو بھی ہو جائے


Arz-e-Gahm Kabhi Us K Ru-ba-Ru Bhi Ho Jaey
Shairi Tou Hoti Hai , Ghuftagoo Bhi Ho Jaey

Zakhm-e-Hijr Bharne Se Yaad Tou Nahi Jati
Kuch Nishaan Tou Rehte Hen ,Dil Rafoo Bhi Ho Jaey

Rind Hen Bharay Baithay Aur May-Kadah Khaali
Kia Baney Aisay Men , Aik "Hoo" Bhi Ho Jaey

Men Idhar Tann Tanha Aur Udhar Zamana Hai
Waey Gar Zamane K Sath Tu Bhi Ho Jaey

Pehli Namuradi Ka Dukh Kahan Basarta Hai
Baad Men Agar Koi Surkh-Roo Bhi Ho Jaey

Deen-o-Dil Tou Kho Baithay, Ab Faraz Kia Gham Hai
Koey Yaar Men Gaarat Aabroo Bhi Ho Jaey.........





Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.