Thursday, 21 February 2013

Pin It

Widgets

Bay Dum Huey Bimaar, بے دم ہوئے بیمار دوا کیوں نہیں


Dawa Kiun Nahi


بے دم ہوئے بیمار دوا کیوں نہیں دیتے
تم اچھے مسیحا ہو شِفا کیوں نہیں دیتے

دردِ شبِ ہجراں کی جزا کیوں نہیں دیتے
خونِ دلِ وحشی کا صِلا کیوں نہیں دیتے

مِٹ جائے گی مُخلوق تو انصاف کرو گے
منصف ہو تو اب حشر اُٹھا کیوں نہیں دیتے

ہاں نکتہ ورد لاؤ لب و دل کی گواہی
ہاں نغمہ گرو ساز صدا کیوں نہیں دیتے

پیمانِ جُنوں ہاتھوں کو شرمائے گا کب تک
دل والو! گریباں کا پتا کیوں نہیں دیتے

بربادیِ دل جبر نہیں فیض کسی کا
وہ دشمنِ جاں ہے تو بُھلا کیوں نہیں دیتے

Bay Dum Huey Bimaar, Dawa Kiun Nahi Detey
Tum Achay Masihaa Ho Shifa Kiun Nahi Detey

Dard-e-Shab-e-Hijraan Ki Jaza Kiun Nahi Detey
Khoon Dil-e-Wehshi Ka Sila Kiun Nahi Detey

Mit Jayeygi Makhlooq, Tou Insaaf Karo Gay
Munsif Ho Tou Hashar Utha Kiun Nahi Detey

Han Nuqta-e-Vird Lao, Lab-o-Dil Ki Gawahe
Han Nagma Garo’n Saaz Sada Kiun Nahi Detey

Pemaan Junoo’n Haathon Ko Sharmaeyga Kab Tak
Dil Waalo Girebaan Ka Pata Kiun Nahi Detey

Barbadi-e-Dil Jabr Nahi Faiz Kisi Ka
Woh Dushman-e-Jaan Hai Tou Bhula Kiun Nahi Detey…..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It





Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.