Thursday, 14 February 2013

Pin It

Widgets

Bharkaein Meri Piyaas Ko بھڑکائیں میری پیاس کو

Aksar Teri Aankhein

بھڑکائیں میری پیاس کو اکثر تیری آنکھیں
صحرا میرا چہرہ ہے سمندر تیری آنکھیں

پھر کون بھلا داد تبسم انہیں دے گا
روئیں گی بہت مجھ سے بچھڑ کر تیری آنکھیں

خالی جو ہوئ شام غریباں کی ھتھیلی
 کیا کیا نہ لٹاتی رہی گوھر تیری آنکھیں

بوجھل نظر آتی ہیں بظاہر مجھے لیکن
کھلتی ہیں بہت دل میں اُتَر کر تیری آنکھیں

اب تک میری یادوں سے مٹائے نہیں مٹتا
بھیگی ہوئی شام کا منظر ، تیری آنکھیں

ممکن ہو تو اک تازہ غزل اور بھی کہہ لوں
پھر اوڑھ نا لیں خواب کی چادر تیری آنکھیں

میں سنگ صفت ایک ہی رستے میں کھڑا ہوں
شائد مجھے دیکھں گی پلٹ کر تیری آنکھیں

یوں دیکھتے رہنا اسے اچھا نہیں محسن
وہ کانچ کا پیکر ہے تو پتھر تیری آنکھیں

Bharkaein Meri Piyaas Ko Aksar Teri Aankhein
Sehra Mera Chehra Hai Samandar Teri Aankhein

Phir Kon Bhala Daad-e-Tabassum Inhein De Ga
Roein Gi Bohat Mujh Se Bichar Kar Teri Aankhein

Khaali Jo Hui Shaam-e-Garibaan Ki Hatheli
Kia Kia Na Lutati Rahee’n Gohar Teri Aankhein

Bojhal Nazar Aati Hain , Bazahir Mujhe Lekin
Khilti Hain Bohat Dil Mein Utar Kar Teri Aankhein

Ab Tak Meri Yaadon Se Mitaye Nahi Mit'ta
Bheegi Hui Ek Shaam Ka Manzar, Teri Aankhein

Mumkin Ho Tou Ik Taza Ghazal Or Bhi Keh Loon
Shayad Mujhe Dekhein Gi Palat Kar Teri Aankhein

Men Sang-e-Sift Aik He Rastay Men Khara Hoon
Shayad Mujhe Dekhein Gi Palat Kar Teri Aankhein

Yun Dekhtay Rehna Usay , Acha Nahi Mohsin
Woh Kaanch Ka Paikar Hai Tou, Pathar Teri Aankhein..


 


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.