Sunday, 3 February 2013

Pin It

Widgets

Dar E Qafas Se Paray Jab درِ قفس سے پرے جب صبا


درِ قفس سے پرے جب صبا گزرتی ہے
کسے خبر کہ اسیروں پہ کیا گزرتی ہے

تعلقات ابھی اس قدر نہ ٹوٹے تھے
کہ تیری یاد بھی دل سے خفا گزرتی ہے

وہ اب ملے بھی تو ملتا ہے اس طرح جیسے
بجھے چراغ کو چھو کر ہوا گزرتی ہے

فقیر کب کے گئے جنگلوں کی سمت مگر
گلی سے آج بھی ان کی صدا گزرتی ہے

یہ اہلِ ہجر کی بستی ہے احتیاط سے چل
مصیبتوں کی یہاں انتہا گزرتی ہے

بھنور سے بچ تو گئیں کشتیاں مگر اب کے
دلوں کی خیر کہ موجِ بلا گزرتی ہے

نہ پوچھ اپنی انا کی بغاوتیں محسن
درِ قبول سے بچ کر دعا گزرتی ہے



Dar E Qafas Se Paray Jab Saba Guzarti Hai
Kisay Khabar K Aseeron Pe Kia Guzarti Hai

Ta’alluqaat Abhi Is Qadar Na Tootay Thay
K Teri Yaad Bhi Dil Se Khafa Guzarti Hai

Woh Ab Milay Bhi To Milta Hai Is Traha Jaisay
Bujhay Charagh Ko Choo Kar Hawa Guzarti Hai

Faqeer Kab K Gaey Jungalon Ki Simt Magar
Gali Se Aaj Bhi Unki Sada Guzarti hai

Yeh Ehal-e-Hijjr Kii Basti Hai Ehtiyaat Se Chal
Musibaton Ki Yahan Inteha Guzarti Hai

Bhanwar Se Bach Tou Gaieen Kashtiyaan Magar Ab K
Dilon Ki Khair K Mouj –e-Bala Guzartii Hai

Na Pooch Apni Aana Kii Baghawatien "Mohsin "
Dar E Qabool SeBach K Dua Guzarti Hai..........


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.