Monday, 4 February 2013

Pin It

Widgets

Dil K Darya Ko Kisi Roz دل کے دریا کو کسی روزاُترجانا


dil k darya



دل کے دریا کو کسی روز اُتر جانا ہے
اتنا بے سمت نہ چل، لوٹ کے گھر جانا ہے

اُس تک آتی ہے تو ہر چیز ٹھر جاتی ہے
جیسے پانا ہی اسے، اصل میں مر جانا ہے

بول اے شامِ سفر، رنگِ رہائی کیا ہے؟
دل کو رکنا ہے کہ تاروں کو ٹھہر جانا ہے

کون اُبھرتے ہوئے مہتاب کا رستہ روکے
اس کو ہر طور سوئے دشتِ سحر جانا ہے

میں کِھلا ہوں تو اسی خاک میں ملنا ہے مجھے
وہ تو خوشبو ہے، اسے اگلے نگر جانا ہے

وہ ترے حُسن کا جادو ہو کہ میرا غمِ دل
ہر مسافر کو کسی گھاٹ اُتر جانا ہے

Dil K Darya Ko Kisi Roz Utar Jana Hay
Itna Be-Simt Na Chal Loat K Ghar Jana Hay

Us Tak Aati Hay To Har Cheez Thehar Jati Hay
Jaisay Pana He Usay Asal Main Mar Jana Hay

Bol  A Sham-e-Safar Rang-e-Rihaye Kia Hay
Dil Ko Rukna Hay K Taron Ko Thehar Jana Hay

Kon Ubhartay Hoey Mehtaab Ka Rasta Rokay
Us Ko Har Tour Soy-e-Dasht-e-Sahar Jana Hay

Main Khila Hon Tou Isi Khaak Main Milna Hay Mujhe
Woh Tou Khushboo Hay Usay Aglay Nagar Jana Hay

Wo Teray Husun Ka Jadu Ho K Mera Gham-e-Dil
Har Musafir Ko Kisi Ghaat Utar Jana Hay……….
  


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.