Tuesday, 5 February 2013

Pin It

Widgets

Fankaar Hai Tou Hath Pe فنکار ہے تو ہاتھ پہ




Sooraj Saja k


فنکار ہے تو ہاتھ پہ سورج سجا کے لا
بجھتا ہوا دِیا نہ مقابل ہوا کے لا

دریا کا اِنتقام ڈبو دے نہ گھر تیرا
ساحِل سے روز روز نہ کنکر اٹھا کے لا

تھوڑی سی اور موج میں آ اے ہوائے گُل
تھوڑی سی اُس کے جسم کی خُوشبو چُرا کے لا

ساماں وفا کا باندھ مگر سوچ سوچ کر
اس ابتدأ میں یوں نہ سخت انتہا کے لا

گر سوچنا ہے اہل مشیت کے حوصلے
میدان سے گھر میں اِک میت اُٹھا کے لا
   
محسن اب اُس کا نام ہے سب کی زبان پر
کِس نے کہا تھا اُس کو غزل میں سجا کے لا


Fankaar Hai Tou Hath Pe Sooraj Saja K La
Bhujhta Hua Diya Na Muqabil Hawa K La

Darya Ka Inteqaam Dabo De Na Ghar Tera
Saahil Se Roz Roz Na Kankar Utha K La

Thori Si Aur Moj Men Aa Ae Hawa-e-Gul
Thori Si Us K Jism Ki Khushbo Chura K La

Samaan Wafa Ka Bandh Magr Soch Soch Kar
Is Ibtidaa Men Yun Na Sakhat Inteha Ki La

Gar Dekhna Hy Ehl-e-Mashiyat Ka Hosla
Medan Se Ghar Men Ek Maiyet Utha K La

Mohsin Ab Uska Naam Hy Sabki Zubaan Par
Kis Ne Kaha Tha Usko Ghazal Men Saja K La..

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.