Monday, 11 February 2013

Pin It

Widgets

'Ghum Sum Si Rahguzar Thi گم سم سی رہگزر تھی


Kinara Nadi Ka

گم سم سی رہگزر تھی ، کنارہ ندی کا تھا
پانی میں چاند ، چاند میں چہرہ کسی کا تھا

اب زندگی سنبھل کے لیتا ہے تیرا نام
یہ دل کے جس کو شوق کبھی خودکشی کا تھا

کچھ ابر بھی تھے بانجھ زمین سے ڈرے ہوئے
کچھ ذائقہ ہوا میں میری تشنگی کا تھا

کہنے کو ڈھونڈتے تھے سبھی اپنے خد و خال
ورنہ میری غزل میں تو سب کچھ اسی کا تھا

وہ احتیاط جان تھی کے بے ربطی خیال
سائے پہ بھی گمان مجھے آدمی کا تھا

مشکل کہاں تھے ترک محبت کے مرحلے
اے دل مگر سوال تیری زندگی کا تھا

وہ جس کی دوستی ہی متاع خلوص تھی
محسن وہ شخص بھی میرا دشمن کبھی کا تھا

'Ghum Sum Si Rahguzar Thi Kinaara Nadi Ka Tha
Paani Men Chaand,Chaand Men Chehra Kisi Ka Tha


Ab Zindgi Sanbhal K Leta Hai Tera Naam
Ye Dil K Jis Kø Shøq Kabhi Khudkushi Ka Tha


Kuch Abar Bhi Thay Baanjh Zameen Se Daray Høwe
Kuch Zaaiqa Hawa Men Meri Tishngi Ka Tha


Kehne Kø Dhøndtay Thay Sabhi Apne Khad-o-Khaal,
Warna Meri Ghazal Men Tøu  Sab Kuch Usi Ka Tha


Woh Ehiyat-e-Jan Thi  K Be-Rabti Khayal
Saey Pay Bhi Gumaan Mujhe Aadmi Ka Tha


Mushkil Kahan Thay Tark-e-Møhabbat K Marhalay
Ay Dil Magar Sawaal Teri Zindagi Ka Tha


Wøh Jis Ki Døsti He Mataä-e-Khuloøs Thi
Mohsin Wøh Shakhs Bhi Mera Dushman Kabhi Ka Tha..'





Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It





 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.