Sunday, 17 February 2013

Pin It

Widgets

Har Aik Zakhm Ka Chehra ہر ایک زخم کا چہرہ گلاب جیسا ہے



Gylaab Jesa Hay


ہر ایک زخم کا چہرہ گلاب جیسا ہے
مگر یہ جاگتا منظر بھی خواب جییسا ہے
 
یہ تلخ تلخ سا لہجہ، یہ تیز تیز سی بات
مزاج یار کا عالم شراب جیسا ہے
 
مرا سخن بھی چمن در چمن شفق کی پھوار
ترا بدن بھی مہکتے گلاب جیسا ہے
 
بڑا طویل، نہایت حسیں، بہت مبہم
مرا سوال تمہارے جواب جیسا ہے
 
تو زندگی کے حقائق کی تہہ میں یوں نہ اتر
کہ اس ندی کا بہاؤ چناب جیسا ہے
 
تری نظر ہی نہیں حرف آشنا ورنہ
ہر ایک چہرہ یہاں پر کتاب جیسا ہے
 
چمک اٹھے تو سمندر، بجھے تو ریت کی لہر
مرے خیال کا دریا سراب جیسا ہے
 
ترے قریب بھی رہ کر نہ پا سکوں تجھ کو
ترے خیال کا جلوہ حباب جیسا ہے

 
Har Aik Zakhm Ka Chehra Gulaab Jesa Hai
Magar Yeh Jaagta Manzar Bhi Khuwab Jesa Hai

Yeh Talkh Talkh Sa Lehja, Yeh Taiz Taiz Si Baat
Mizaaj-E-Yaar Ka Aalam Sharaab Jesa Hai

Bara Sukhan Bhi Chaman Dar Chaman Shafaq Ki Phuwaar
Mera Sawaal Tumharey Jawaab Jesa Hai

Bara Taveel, Neyhayet Haseen, Bohat Mubhim
Mera Sawaal Tumhare Jawaab Jesa Hai

Tu Zindagi Ke Haqaayeq Ki Teh Main Yun Na Utar
K  Iss Nadi Ka Bahaa’o Chanaab Jesa Hai

Teri Nazar Hi Nahi Harf Ashnaa Warna
Har Ek Chehra Yahan Kitaab Jesa Hai

Chamak Uthe To Samandar, Bujhe Tou Rait Ki Leher
Mere Khayal Ka Darya Saraab Jesa Hai

Tere Qareeb Bhi Reh Kar Na Paa Sakoon Tujh Ko
Tere Khayal Ka Jalwaa Hubaab Jesa Hai.. 




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

3 comments:

Thanks For Nice Comments.