Friday, 8 February 2013

Pin It

Widgets

Hujoom Mein Tha Woh ہجوم میں تھا وہ کھل کرنا روسکا



so saka hoga
ہجوم میں تھا وہ کھل کر نا رو سکا ہوگا
مگر یقین ہے کے شب بھر نا سو سکا ہوگا

وہ شخص جس کو سمجھنے میں مجھ کو عمر لگی
بچھڑ کے مجھ سے کسی کا نا ہو سکا ہوگا

لزرتے ہاتھ ، شکستہ سی ڈور سانسوں کی
وہ خشک پھول کہاں تک پرو سکا ہوگا ؟

بہت اجاڑ تھے پاتال اسکی آنکھوں کے
وہ آنسوؤں سے نا دامن بھگو سکا ہوگا

میرے لیے وہ قبیلے کو چھوڑ کر آتا
مجھے یقین ہے یہ اس سے نا ہو سکا ہوگا

Hujoom Mein Tha Woh Khul Kar Na Ro Saka Hoga
Magar Yaqeen Hai K Shab Bhar Na So Saka Hoga,

Woh Shakhs Jis Ko Samajhne Mein Mujhko Umar Lagi
Bicharr K Mujh Se Kisi Ka Na Ho Saka Hoga

Laraztey Haath, Shikasta Si Dor Saanson Ki
Woh Khushak Phool Kahan Tak Piro Saka Hoga ?

Boht Ujaarr They Pataal Uski Aankhon K
Woh Ansuon Se Na Daman Bhigo Saka Hoga

Merey Liye Woh Qabeeley Ko Chor Kar Aata
Muje Yaqeen Hai Yeh Us Sey Na Ho Saka Hoga..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.