Tuesday, 5 February 2013

Pin It

Widgets

Junoon Main Shouq Ki جُنوں میں شوق کی گہرائیوں سے ڈرتا رہا


جُنوں میں شوق کی گہرائیوں سے ڈرتا رہا
میں اپنی ذات کی سچّائیوں سے ڈرتا رہا

محبّتوں سے شناسا ہُوا میں جس دن سے
پھر اُس کے بعد شناسائیوں سے ڈرتا رہا

وہ چاہتا تھا کہ تنہا مِلوں، تو بات کرے
میں کیا کروں کہ میں تنہائیوں سے ڈرتا رہا

میں ریگزار تھا، مجھ میں بسے تھے سنّاٹے
اِسی لئے تو میں شہنائیوں سے ڈرتا رہا

میں اپنے باپ کا یوسف تھا، اِس لئے مُحسن
سُکوں سے سو نہ سکا، بھائیوں سے ڈرتا رہا


Junoon Main Shouq Ki Gehraiyon Se Darta Raha
Main Apni Zaat Ki Sachaiyon Se Darta Raha


Mohabbton Se Shanasa Huwa Main Jis Din Se
Phir Us K Baad Shanasaiyon Se Darta Raha


Wo Chahta Tha K Tanha Miloon Tou Baat Karey
Main Kia Karun K Main Tanhaiyon Se Darta Raha


Mein Regzaar Tha Mujh Menn Basay Thay Sannatay
Isi Liye Tou Main Shehnaiyon Se Darta Raha


Main Apne Baap Ka Yousuf Tha Is Liye Mohsin
Sukoon Se, So Na Saka Bhaiyon Se Darta Raha…!!



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.