Wednesday, 13 February 2013

Pin It

Widgets

Khush Hoon K Tere Gham Ka خوش ہوں کہ تیرے غم کا

Sahara Mujhe Mila

خوش ہوں کہ تیرے غم کا سہارا مجھے ملا
ٹوٹا جو آسمان، ستارہ مجھے ملا

کچھ لوگ ساری عمر ہی محرومِ غم رہے
اک خوابِ عشق تھا جو دوبارہ مجھے ملا

پھر شامِ زندگی کے اُسی موڑ پر ہوں میں
جس شام، التفات تمہارا مجھے ملا

گردش میں لا کے پاؤں کے نیچے زمین کو
اک دور کے سفر کا اشارہ مجھے ملا

اِس ہجر میں شریک تھا تُو بھی مرا تو پھر
کیسے ہوا کہ سارے کا سارا مجھے ملا

ہر اٹھتی موج کرنے لگی تھی زمیں سے دور
یوں ، آسماں کا ایک کنارہ مجھے ملا

ترجیح تیری اور سہی اب مگر وہ خواب
سرمایۂ حیات ہمارا، مجھے ملا

جلنے لگی تھیں مشعلیں خیموں کے آس پاس
پھر کیسے کوچ کا وہ اشارہ مجھے ملا

پھر رات کے دیار تلک ساتھ ہم چلے
رستے میں جب وہ شام کا تارا مجھے ملا
Khush Hoon K Tere Gham Ka Sahara Mujhe Mila
Toota Jo Aasman Se , Sitara Mujhe Mila

Kuch Log Sari Umar He Mehroom-e-Gham Rahey
Ik Khuwab Ishq Tha Jo Dobara Nahi Mila

Phir Sham-E-Zindagi K Usi Morr Pe Hon Men
Jis Shaam Itafaat Tumhara Mujhe Mila

Gardish Men La K Paon K Neechy Zameen Ko
Ik Door K Safar Ka Ishara Mujhe Mila

Is Hijr Men Shareek That U Bhi Mara Tou Phir
Kesey Hua K Sarey Ka Sara Mujhe Mila

Har Uthti Mouj Karne Lagi Thi Zameen Se Door
Youn Aasman Ka Aik Kinara Mujhe Mila

Tarjeeh Teri Or Sahib Ab, Magar Woh Khuwab
Sarmaya-e-Hayaat Hamara  Mujhe Mila

Jalne Lagi Mash’alein Khaimo’n K Aas Paas
Phir Kese Kooch Ka Woh Ishara Mujhe Mila

Phir Raat K Dayaar Talak Sath Hum Chalay
Rastay Men Jab Woh Sham Ka Tara Mujhe Mila..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It








 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.