Tuesday, 5 February 2013

Pin It

Widgets

Kisi Ki Yaad Mein Palkein Zara کسی کی یاد میں پلکیں ذرا بھگو لیتے


Phool Sookh gaey

کسی کی یاد میں پلکیں ذرا بھگو لیتے
اداس رات کی تنہائیوں میں رو لیتے

دکھوں کا بوجھ اکیلے سنبھلتا نہیں ہے
کہیں وہ ملتا تو اس سے لپٹ کے رو لیتے

تمہاری راہ میں شاخوں پہ پھول سوکھ گئے
کبھی ہوا کی طرح اس طرف بھی ہو لیتے

یہ کیا کہ روز وہی چاندنی کا بستر ہو
کبھی تو دھوپ کی چادر بچھا کے سو لیتے

اگر سفر میں ہمارا بھی ہمسفر ہوتا
بڑی خوشی سے انہیں پتھروں پہ سو لیتے



Kisi Ki Yaad Mein Palkein Zara Bhigo Lete Hain
Udaas Raat Ki Tanhai Mein Ro Lete Hain

Dukhon Ka Bojh Akele Sambhalta Nahi Hai
Kahin Woh Milta Tou Us Se Lipat K Ro Lete

Tumhari Raah Men Shakhon Pe Phool  Sookh Gaey
Kabhi Hawa Ki Tarha Is Taraf Bhi Ho Lete

Yeh Kia K Roz Wohi Chandni Ka Bistar Ho
Kabhi Tou Dhoop Ki Chadar Bicha K So Lete

Agar Safar Me Hamara Bhi Humsafar Hota
Badi Khushi Se Inhi Pathro Pe So Lete …..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It








Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.