Wednesday, 27 February 2013

Pin It

Widgets

Mere Qareeb He Go Zard Shaal مرے قریب ہی گو زرد شال

Mere Qareeb He

مرے قریب ہی گو زرد شال رکھی ہے
بدن پہ میں نے مگر برف ڈال رکھی ہے

سنائی دی وہی آواز سبز پتوں سے
کسی کی یاد ہوا نے سنبھال رکھی ہے

بھٹک بھٹک گئی سسی تھلوں کے ٹیلے پر
یہ گوٹھ پیار کی گو دیکھ بھا ل رکھی ہے

ہمارے دل پہ محبت کا وار اچانک تھا
رکھی ہی رہ گئی جس جا پہ ڈھال رکھی ہے

رہیں گے نام وہ پیڑوں پہ نقش صدیوں تک
چڑھا کے جن پہ بہاروں نے چھال رکھی ہے

کلائیوں میں کھنک کر رگوں کو کاٹا ہے
کہ چوڑیوں نے ستم کی بھی چال رکھی ہے

تلاش بستی میں کرتا ہے جس کو شہزادہ
وہ مورنی کسی جنگل نے پال رکھی ہے

میں تکتی رہتی ہوں اس سایہ دار برگد کو
گھنیری زلف کی اس میں مثال رکھی ہے

رہِ یقیں پہ قدم اٹھ نہیں سکا نیناں
گماں نے پاؤں میں زنجیر ڈال رکھی ہے
Mere Qareeb He Go Zard Shaal Rakhi Hay
Badan Pay Men Ne Magar Barf Daal Rakhi Hay

Sunaie Di Wohi Awaaz Sabz Patton Say
Kisi Ki Yaad Hawa Ne Sanbhaal Rakhi Hay

Bhatak Bhatak Gaie Sassi, Thalon K Teelon Par
Yeh Goth Piyaar Ki Go Dekh Bhaal Rakhi Hay

Hamare Dil Pay Mohabbat Ka Waar Achanak Tha
Rakhi He Reh Gaie, Jis Ja Pay Dhaal Rakhi Hay

Rahen Gay Naam Woh Pairron Pay Naqsh Sadyon Tak
Charha K Jin Pay Baharon Ne Chhaal Rakhi Hay

Kalaeyon Ne Khanak Kar Ragon Ko Kata Hay
K Chorriyon Ne Sitam Ki Bhi Chaal Rakhi Hay

Talash Basti Men Karta Hay Jis Ko Shehzada
Woh Morni Kisi Jungle Ne Paal Rakhi Hay

Men Takti Rehti Hoon Is Saya Daar Bargad Ko
Ghaneri Zulf Ki Is Men Misaal Rakhi Hay

Reh Yaqeen Pay Qadam Uth Nahi Saka Naina
Gumaan Ne Paon Men Zanjeer Daal Rakhi Hay…




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.