Wednesday, 20 February 2013

Pin It

Widgets

Mil Gaya Tha Tou Usay Khud مِل گیا تھا تو اُسے خود سے


  
Khafa Rakhna Tha

مِل گیا تھا تو اُسے خود سے خفا رکھنا تھا
دل کو کچھ دیر تو مصروفِ دعا رکھنا تھا

میں نہ کہتا تھا کہ سانپوں سے اَٹے ہیں رستے
گھر سے نکلے تھے تو ہاتھوں میں عصا رکھنا تھا

بات جب ترکِ تعّلُق پہ ہی ٹھہری تھی تو پھر
دل میں احساسِ غمِ یار بھی کیا رکھنا تھا

دامنِ موجِ ہَوا یوں تو نہ خالی جاتا
گھر کی دہلیز پہ کوئی تو دیا رکھنا تھا

کوئی جگنو تہہِ داماں بھی چھُپا سکتے تھے
کوئی آنسو پسِ مژگاں ہی بچا رکھنا تھا

کیا خبر اُس کے تعاقب میں ہوں کتنی سوچیں؟
اپنا انداز تو اوروں سے جدُا رکھنا تھا

چاندنی بند کواڑوں میں کہاں اُترے گی؟
اِک دریچہ تو بھرے گھر میں کھلا رکھنا تھا

اُس کی خوشبو سے سجانا تھا جو دل کو محسن
اُس کی سانسوں کا لقب موجِ صبا رکھنا تھا



Mil Gaya Tha Usay Khud Se Khafa Rakhna Tha
Dil Ko Kuch Dair Tou Masroof-e-Dua Rakhna Tha

Men Na Kehta Tha K Saanpo’n Se Atay Hen Rastay
Ghar Se Niklay Thay Tou Hathon Men Assa Rakhna Tha

Baat Jab Taq-e-Ta’alluq Pe He Thehri Thi Tou Phir
Dil Men Ehsas-e-Ghame Yaar Bhi Kia Rakhna Tha

Daman-e-Mouj-e-Hawa Yun Tou Na Khali Jata
Ghar Ki Dehleez Pay Koi Tou Diya Rakhna Tha

Koi Junoo Teh-e-Damaan Bhi Chupa Saktay Thay
Koi Aansoo Pas-e-Margaan He Bacha Rakhna Tha

Kia Kahabar Us K Ta’aqub Men Hon Kitni Sochen
Apna Andaaz Tou Auron Se Juda Rakhna Tha

Chaandni Band Kuwaron Men Kahan Utray Gi
Ik Dareecha Tou Bharay Ghar Men Khula Rakhna Tha

Uski Khushboo Se Sajata Tha Jo Dil Ko Mohsin
Uski Saanson Ka Laqab Mouj-e-Saba Rakhna Tha….







Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


 


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.