Friday, 22 February 2013

Pin It

Widgets

Misaal-e-Barg Mein Khud Ko مثالِ برگ میں خود کو


Woh Jinki Aankhon

مثالِ برگ میں خود کو اڑانا چاہتی ہوں
ہوائے تند پہ مسکن بنانا چاہتی ہوں

وہ جن کی آنکھوں میں ہوتا ہے زندگی میں ملال
اسی قبیلے سے خود کو ملانا چاہتی ہوں

جہاں کے بند ہیں صدیوں سے مجھ پہ دروازے
میں ایک بار اسی گھر میں جانا چاہتی ہوں

ستم شعار کی چوکھٹ پہ عدل کی زنجیر
برائے داد رسی اب ہلانا چاہتی ہوں

نجانے کیسے گزاروں گی ہجر کی ساعت
گھڑی کو توڑ کے سب بھول جانا چاہتی ہوں

مسافتوں کو ملی منزلِ طلب نیناں
وفا کی راہ میں اپنا ، ٹھکانہ چاہتی ہو ں

Misaal-e-Barg Mein Khud Ko Urrana Chahti Hoon
Hawa –e-Tund Pay Maskan Banana Chahti Hoon

Wo Jin Ki Aankhon Mein Hota Hay Zindagi Ka Malaal
Usi Qabeelay  Se Khud Ko Milana  Chahti Hoon

Jahan K Band Hain Sadiyoon Se, Mujh Pe Darwaze
Mein Aik Baar Usi Ghar Mein Jana Chahti Hoon

Sitam Shua’ar Ki Chokhat Pe Adal Ki Zanjeer
Bara-e- Daad Rassi Ab Hilana Chahti Hoon

Najane Kaisey  Guzaron Gi Hijar Ki Sa’at
Gharri Ko Torr K Sab Bhool Jana Chahti Hoon

Musafaton Ko Miley Manzil-e-Talab  Naina
Wafa Ki Raah Men Apna, Thikana Chahti Hoon….



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.