Thursday, 21 February 2013

Pin It

Widgets

Tumhari Yaad K Jab Zakhm تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے


Tumeh Yaad Karne

تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے لگتے ہیں
کسی بہانے تمہں یاد کرنے لگتے ہیں

حدیث  یار کے عنوان نکھرنے لگتے ہیں
تو ہر حریم میں گسیو سنورنے لگتے ہیں

ہر اجنبی ہمیں محرر دکھائی دیتا ہے
جو اب بھی تیری گلی سے گزرنے لگتے ہیں

صبا سے کرتے ہیں غربت نصیب ذکرِ وطن
تو چشم ِ صبح میں آنسو آبھرنے لگتے ہیں

وہ جب بھی کرتے ہیں اس نطق و لب کی بخیہ گری
فضا میں اور بھی نغمے بکھرنے لگتے ہیں

در قفس کے اندھیرے کی مہر لگتی ہے
تو فیض دل میں ستارے اترنے لگتے ہیں

Tumhari Yaad K Jab Zakham Bharney Lagtey Hain
Kisi Bahaaney Tumeh Yaad Karney Lagtey Hain

Hadees-e-Yaar K Unwaan Nikharney Lagtey Hain
Tou Har Hareem Men Gaisoo Sanwarney Lagtey Hain

Har Ajnabi Hume Mehram Dikhaai Daita Hai
Jo Ab Bhi Teri Gali Say Guzarney Lagtey Hain

Saba Say Kartey Hain Ghurbat Naseeb Zikr-e-Watan
Toh Chashm-e-Subah Men Aansoo Ubharrney Lagtey Hain

Wo Jab Bhi Kartey Hain Us Nutaq Lab Ki Bukhiya Giri
Faza Men  Aur Bhi Naghmey Bikharney Lagtey Hain

Dar-e-Qafas Pay Andheray Ki Mohar Lagti Hai
Toh Faiz Dil Mai Sitaarey Utarney Lagtey Hain....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It




Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.