Thursday, 28 February 2013

Pin It

Widgets

Us Ne Narm Kalyon Ko اُس نے نرم کلیوں کو

Usne Narm Kalyon
اُس نے نرم کلیوں کو روند روند پاؤں سے
تازگی بہاروں کی چھین لی اداؤں سے

بھیج اپنے لہجے کی نرم گر م کچھ تپش
برف کب پگھلتی ہے، چاند کی شعاعوں سے

پاؤں میں خیالوں کے، راستے بچھائے ہیں
آج ہی چرانے ہیں، پھول اس کے گاؤں سے

دور دور رہتی ہے ایک غمزدہ لڑکی
ہجر توں کی راہوں سے، وصل کی سراؤں سے

تیرے جسم کی خوشبو، شام کی اداسی میں
موتیے کے پھولوں نے چھین لی ہواؤں سے

پیار کی کہانی میں سچ اگر ملے نیناں
عمر باندھ لیتی ہیں لڑکیاں وفاؤں سے
Us Ne Narm Kalyon Ko Rond Rond Paaon Se
Taazgi Baharon Ki Cheen Li Adaaon Se

Bhaij Apne Lehjey Ki Narm Narm Kuch Tapish
Barf Kab Pighalti Hai Chaand Ki Shuaaon Se

Paon Mein Khayalon K Raaste Bichaey Hain
Aaj He Churaey Hain Phool Us K Gaaon Se

Door Door Rehti Hay Ik Ghamzada Larki
Hijraton Ki Raahon Se, Vasal Ki Sarao’n Se

Tere Jism Ki Khushboo Sham Ki Udasi Men
Motiye K Phoolon Ne Cheen Li Hawaon Se

Iyar Ki Kahani Men Such Agar Milay Naina
 Umr Baandh Leti Hen Larkiyan Wafaon Se ..


 


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

2 comments:

Thanks For Nice Comments.