Thursday, 7 February 2013

Pin It

Widgets

Zindagi Khawab-e-Pareshaan Se زندگی خوابِ پریشاں سے




Mohsin Naqvi Poetry

زندگی خوابِ پریشاں سے زیادہ تو نہیں
اس میں تعبیر بھی مل جائے یہ وعدہ تو نہیں

  بات بے بات اُلجھنے کی یہ خُو کیسی ہے؟
یہ بتا تیرا بچھڑنے کا ارادہ تو نہیں

کون خوشبو کے تعقب میں گیا دور تلک
لوگ سادہ ہیں مگر اتنے بھی سادہ تو نہیں

آپ جائیں گے تو ہم حد سے گزر جائیں گے
شہسوار آپ سہی، ہم بھی پیادہ تو نہیں

کس خوشی میں بھیجا ہے بتا سُرخ گلاب؟
ظلم کا یہ تیری جانب سے ارادہ تو نہیں

بےوفا ہم ہی سہی، خود پہ بھی کچھ غور کرو
بے رُخی آپ کی بھی حد سے زیادہ تو نہیں



Zindagi Khawab-E-Pareshaan Se Zeyada Tou Nahi
 Is Main Tabeer Bhi Mil Jaye Yeh Waada Tou Nahi,

 Baat Be’baat Ulajhney Ki Yeh Hoo Kesi Hai
 Yeh Bata Tera Bicharrne Ka Irada Tou Nahin,

 Kon Khushboo K Peechey Gaya Door Talak
 Log Saada Hain Magar Itney Bhi Saada Tou Nahi, 

Aap Jaen Gay Tou Hum Hadh Se guzar Jaen Gay
Shehsawaar Aap Sahi , Hum Bhi Peyada Tou Nahi

Kis Khushi Se Mujhe Bheja Hai Bata Surkh Gulaab
 Zulm Ka Yeh Teri Jaanib Se Iraada Tou Nahin?

 Bewafa Hum Hi Sahi, Khud Pe Bhi Kuch Ghour Karo
 Be-Rukhi Aap Ki Bhi Hadh Se Ziyada Tou Nahi...........


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.