Sunday, 17 March 2013

Pin It

Widgets

Ajab Taqazay Hen Chahaton K


Usi Ko Mujh Se




عجب تقاضے ہیں چاھتوں کے
بڑی کٹھن یہ مسافتیں ھیں

میں جس کی راھوں میں بچھ گیا ھوں
اُسی کو مجھ سے شکایتں ھیں

شکایتں سب بجا ھیں لیکن
میں کیسے اُس کو یقین دلاؤں

جو مجھ کو جاں سے عزیز تر ھے
اُسے بھلاؤں تو مر نہ جاؤں

میں خاموشی کی انتہا میں
کہاں کہاں سے گزر گیا ھوں

اُسے خبر بھی نہیں ھے شاید
میں دھیرے دھیرے بکھر گیا ھوں
Ajab Taqazay Hen Chahaton K
Bari Kathan Yeh Musafatein Hen

Men Jiski Raahon Men Bich Gaya Hoon
Usi Ko Mujh Say Shikayatein Hen

Shikayatein Sab Baja Hen Lekin
Men Kese Us Ko Yaqeen Dilaon

Jo Mujh Ko Jaan Se Azeez Tar Hai
Usay Bhulaaon Tou Mar Na Jaon

Men Khamoshi Ki Inteha Men
Kahan Kahan Se Guzar Gaya Hoon

Usay Khabar Bhi Nahi Hay Shayad
Men Dheere Dheere Bikhar Gaya Hoon..




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.