Tuesday, 5 March 2013

Pin It

Widgets

Andaaz Hu Ba-Hu Teri Awaz-e-Pa Ka Tha


Dekha Nikal K Bahar

انداز ہو بہو تری آوازِ پا کا تھا
دیکھا نکل کے گھر سے تو جھونکا ہوا کا تھا

اٹھا عجب تضاد سے انسان کا خمیر
عادی فنا کا تھا تو پجاری بقاء کا تھا

ٹوٹا تو کتنے آئینہ خانوں پہ زد پڑی
اٹکا ہوا گلے میں جو پتھر صدا کا تھا

چھپ چھپ کے روؤں اور سرِ انجمن ہنسوں
مجھ کو یہ مشورہ مرے درد آشنا کا تھا

دل راکھ ہو چکا تو چمک اور بڑھ گئی
یہ تیری یاد تھی کہ عمل کیمیا کا تھا

اس حسنِ اتفاق پہ لٹ کر بھی شاد ہوں
تیری رضا جو تھی وہ تقاضا وفا کا تھا

حیران ہوں کہ دار سے کیسے بچا ندیم
وہ شخص تو غریب و غیور انتہا کا تھا




Andaaz Hu Ba-Hu Teri Awaaz-e-Paa Ka Tha
Dekha Nikal K Ghar Se Tou Jhonka Hawa Ka Tha

Utha Ajab Tazaad Se Insaan Ka Khameer
Aahi Fana Ka Tha Tou Pujari Baqa Ka Tha

Toota Tou Kitne Aaeina Khaano Pe Zad Parri
Atka Huva Galey Men Jo Pathar Sada Ka Tha

Chup Chup K Rouo’n Or Sar-e-Anjuman Hansoon
Mujh Ko Ye Mashvara Mere Dard-e-Aashna Ka Tha

Dil Raakh Ho Chuka Tou Chamak Or Bhar Gai
Yeh Teri Yaad Thi K Amal Keemya Ka Tha

Is Husan-e-Ittafaaq Pay Lut Kar B Shaad Hoon
Teri Raza Jo Thi Woh Takaza Wafa Ka Tha

Hairaan Hoon K Daar Se Kaisey Bacha Nadeem
Woh Shakhs Tou Ghareeb Wa Gayyoor Inteha Ka Tha
..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

 


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.