Saturday, 30 March 2013

Pin It

Widgets

Baaghi Men Aadmi Se, Na Munkir Khuda Ka Tha..



Gum Sum Khara

باغی میں آدمی سے, نہ مُنکر خدا کا تھا
درپیش مسئلہ مری اپنی اَنا کا تھا

گُم صُم کھڑا تھا ایک شجر دشتِ خوف میں
شاید وہ منتظر کسی اندھی ہَوا کا تھا

اپنے دُھویں کو چھوڑ گیا آسمان پر
بجھتے ہوئے دیے میں غرور انتہا کا تھا

دیکھا تو وہ حسین لگا سارے شہر میں
سوچا تو وہ ذہین بھی ظالم بلا کا تھا

لہرا رہا تھا کل جو سرِ شاخِ بے لباس
دامن کا تار تھا کہ وہ پرچم صبا کا تھا؟

ورنہ مکانِ ِتیرہ کہاں‘ چاندنی کہاں؟
اُس دستِ بے چراغ میں شعلہ حنا کا تھا

میں خوش ہُوا کہ لوگ اکٹھے ہیں شہر کے
باہر گلی میں شور تھا لیکن ہوا کا تھا

اُس کو غلافِ روح میں رکھّا سنبھال کر
محسن وہ زخم بھی تو کسی آشنا کا تھا
Baaghi Men Aadmi Se, Na Munkir Khuda Ka Tha
Dar-Paish  Mus’ala  Meri  Apni  Ana  Ka  Tha

Gum-Sum Khara Tha Aik Shajar Dash-e-Khof Men
Shayad Woh Muntazir Kisi Andhi Hawa Ka Tha

Apne Dhooein Ko Chorr Gaya Aasmaan Par
Bujhte Huey Diye Men Guroor Inteha Ka Tha

Dekha Tou Woh Haseen Laga Sarey Shehar Men
Socha Tou Woh Zaheen  Bhi Zaalim Bala Ka Tha

Lehra Raha Tha Kal Jo Sar-e-Shaakh Be-Libaas
Daaman Ka taar Tha K Woh Parchamj Saba Ka Tha?

Warna Makaan Tera Kahan, Chaandni Kahan?
Us Dast-e-Be-Charagh Men Shola Hina Ka Tha

Men Khush Hua K Log Ikthay Hen Shehar K
Bahar Gali Men Shor Tha, Lekin Hawa Ka Tha

Us Ko Gilaf-e-Rooh Men rakh Sanbhaal Kar
Mohsin Woh Zakhm Bhi Tou Kisi Aashna Ka Tha..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.