Thursday, 14 March 2013

Pin It

Widgets

Aik Muddat Se Meri Maa Nahi Soyi


Muhje Dar Lagta
عجب ساعتِ رخصت ہے کہ ڈر لگتا ہے
شہر کا شہر مجھے رختِ سفر لگتا ہے

ہم کو دل نے نہیں حالات نے نزدیک کیا
دھوپ میں دور سے ہر شخص شجر لگتا ہے

جس پہ چلتے ہوئے سوچا تھا کہ لوٹ آؤں گا
اب وہ رستہ بھی مجھے شہر بدر لگتا ہے

وقت لفظوں سے بنائی ہوئی چادر جیسا
اوڑھ لیتا ہوں تو سب خوابِ ہنر لگتا ہے

ایک مدت سے مری ماں نہیں سوئی تابش
میں نے اک بار کہا تھا مجھے ڈر لگتا ہے

 







Ajab Sa’at-e-Rukhsat hai K Dar Lagta Hay
Shehar Ka Shehar Mujhe rakht-e-Safar Lagta Hai

Hum Ko Dil Ne Nahi Halaat Ne Nazdeek Kia
Dhoop Men Door Se, Har Shkahs Shajar lagta Hai

Jis Pe Chaltey Houe Socha Tha K Lout Aaonga
Ab Wo Rasta Bhi Mujhe Shehar Badar Lagta Hai

Waqt Lafzon Say Banaee Hui Chaadar Jesa
Orrh Leta Hoon Tou Sab Khuwab-e-Hunar Lagta Hai

Aik Muddat Se Meri Maa Nahi Soee Tabish
Men Ne Ik Baar Kaha Tha Mujhe Dar Lagta Hai…. 



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

3 comments:

Thanks For Nice Comments.