Monday, 25 March 2013

Pin It

Widgets

Hathon Ki Lakeeron Men......

Hathon Ki Lakeeron

بھلا کیا پڑھ لیا اپنے ہاتھوں کی لکیروں میں
کہ اس کی بخششوں کے اتنے چرچے ہیں فقیروں میں

کوئی سورج سے سیکھے، عدل کیا ہے، حق رسی کیا ہے
کہ یکساں دھوپ بٹتی ہے، صغیروں میں کبیروں میں

ابھی غیروں کے دُکھ پہ بھیگنا بُھولی نہیں آنکھیں
ابھی کچھ روشنی باقی ہے لوگوں کے ضمیروں میں

نہ وہ ہوتا، نہ میں اِک شخص کو دِل سے لگا رکھتا
میں دُشمن کو بھی گنتا ہوں محّبت کے سفیروں میں

سبیلیں جس نے اپنے خون کی ہر سو لگائی ہوں
میں صرف ایسے غنی کا نام لکھتا ہوں امیروں میں

بدن آزاد ہے، اندر میرے زنجیر بجتی ہے
کہ میں مختار ہو کر بھی گنا جاؤں اسیروں میں


Bhala Kia Parh Liya Apne Hathon Ki Lakeeron Men
K Uski Bakhshish K Itne Charchay Hen Faqeeron Men

Koi Sooraj Se Seekhe, Adl Kia Hai, Haq Rasi Kia Hai
K Yaksaan Dhoop Bat’ti Hai , Sageeron Men, Kabeeron Men

Abhi Gairon K Dukh Pay Bheegna Bhooli Nahi Aankhein
Abhi Luch Roshni Baqi Hai Logon K Zameeron Men

Na Woh Hota, Na Men Aik Shakhs Ko Dil Se Laga Rakhta
Men Dushman Ko Bhi Ginta Hoon , Mohabbat K Safeeron Men

Saleebein Jis Ne Apne Khoon Ki Har Soo Lagaee Hon
Men Sirf Aise Ghani Ka Naam Likhta Hoon Ameeron Men

Badan Azaad Hai, Andar Mere Zanjeer Bajti Hai
K Men Mukhtaar Ho Kar Bhi Gina Jaon Aseeron Men….


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.