Saturday, 30 March 2013

Pin It

Widgets

Jugnoo, Gohar, Charagh, Ujaley Tou De Gaya...


Ujaley Tou De Gaya

جگنو، گُہر، چراغ، اجالے تو دے گیا
وہ خود کو ڈھونڈنے کے حوالے تو دے گیا

اب اس سے بڑھ کے کیا ہو وراثت فقیر کی
بچوں کو اپنی بھیک کے پیالے تو دے گیا

اب میری سوچ سائے کی صورت ہے اُس کے گرد
میں بجھ کے اپنے چاند کو ہالے تو دے گیا

شاید کہ فصلِ سنگ زنی کچھ قریب ہے
وہ کھیلنے کو برف کے گالے تو دے گیا

اہلِ طلب پہ اُس کے لیے فرض ہے دُعا
خیرات میں وہ چند نوالے تو دے گیا

محسن اُسے قبا کی ضرورت نہ تھی مگر
دُنیا کو روز و شب کے دوشالے تو دے گیا

Jugnoo, Gohar, Charaagh, Ujaley Tou De Gaya
Woh Khud Ko Dhoondne K Hawaley Tou De Gaya

Ab Is Se Barh Kar Kia Ho,  Virasat Faqeer Ki
Bachon Ko Apni Bheek K Piyaley Tou De Gaya

Ab Meri Soch Saey Ki Soorat Hai , Us K Gird
Men Bujh K Apne Chaand Ko Haaley Tou De Gaya

Shayad K Fasl-e-Sung-e-Zani Kuch Qareeb Hai
Woh Khailney Ko Barf K Haaley Tou De Gaya

Ehl-e-Talab  Pe  Us  K  Liye  Farz  Hai  Duaa
Khairaat Men Woh Chund Niwaley Tou De Gaya

Mohsin  Usay  Quba Ki  Zaroorat Na Thi  Magar
Dunya Ko Roz-o-Shab K Do-Shaaley Tou De Gaya…


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
 



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.