Friday, 22 March 2013

Pin It

Widgets

Mujh Ko Ruswa Sar-e-Mehfil Tou Na Karwaya Kare



Kash Aansoo Meri

مُجھ کو رُسوا سرِ محفل تو نہ کروایا کرے
کاش آنسو مِری آنکھوں میں ہی رہ جایا کرے

اے ہَوا مَیں نے تو بس اُس کا پتہ پوچھا تھا
اب کہانی تو نہ ہر بات کی بن جایا کرے

بس بہت دیکھ لے خواب سُہانے دن کے
اب وہ باتوں کی رفاقت سے نہ بہلایا کرے

اِک مصیبت تو نہیں ٹوٹی سو اب اس دِل سے
جس قیامت نے گزرنا ہے گزُر جایا کرے

دل نے اب سوچ لیا ہے کہ یہ ظالم دنیا
جو بھی کرنا ہے کرے مُجھ کو نہ اُلجھایا کرے

جس کے خوابوں کو میں آنکھوں میں سجا کر رکھوں
اس کی خوشبو کبھی مُجھ کو بھی تو مہکا یا کرے

Mujh Ko Ruswa Sar-e-Mehfil Tou Na Karwaya Kare
Kash Aansoo Meri Aankhon Men He Reh Jaya Kare

A Hawa Men Ne Tou Us Ka Pata Poocha Tha
Ab Kahani Tou Na Har Baat Ki Ban Jaya Kare

Bus Bohat Dekh Liye Khuwaab Suhane Din K
Ab Woh Baton Ki Rafaqat Se Na Behlaya Kare

Ik Musibat Tou Nahi Tooti So Ab Is Dil Se
Jis Qayamat Ne Guzarna Hai Guzar Jaya Kare

Dil Ne Ab Soch Liya Hai K Yeh Zaalim Dunya
Jo Bhi Karna Hai Kare, Mujh Ko Na Uljhaya Kare

Jis K Khuwabon Ko Men Aankhon Men Saja Kar Rakhon
.......Uski Khushboo Kabhi Mujh Ko Bhi Tou Mehkaya Ka


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.