Sunday, 31 March 2013

Pin It

Widgets

Mujh Se Mukhlis Tha Na Waqif Mere Jazbaat Se Tha


Mere Jazbaat Se

مُجھ سے مُخلص تھا نہ واقف میرے جزبات سے تھا
اُس کا رِشتہ تو فقط اپنے مفادات سے تھا

اب جو بچھڑا ہے تو کیا روئیں جُدائی پہ تیری
یہ اندیشہ تو ہمیں پہلی ملاقات سے تھا

دِل کے بجھنے کا ہواوں سے گِلہ کیا کروں
یہ دِیّا نَزا کے عالم میں تو کَل رات سے تھا

مرکز شہر میں رھنے پہ مضر تھی خلقت
اور میں وابستہ ترے دل کے مضافات سے تھا

میں خواابوں کا مکیں اور تعلق میرا
تیرے ناطے کبھی خوابوں کے محلات سے  تھا

لَب کُشائی پر کھلا اُس کے سُخن کا اِفلاس
کتنا آراستہ وہ اطلاس و بنات سے تھا



Mujh Se Mukhlis Tha Na Waqif Mere Jazbaat Se Tha
Us Ka Rishta Tou Faqat Apne Mafadaat Se Tha

Ab Jo Bichra Hai Tou Kia Rooien Judai Pe Teri
Ye Andaisha Tou Hamien Pehli Mulaqaat Se Tha

Dil K Bujhne Ka Hawaoon Se Gila Kia Karna
Ye Diya  Nazaa K Aalam Mein Tou Kal Raat Se Tha

Markaz- e-Shehar Mein Rehne Pe Muser Thi Khalqat
Aur Mein Wabasta Tere Dil K Muzafaat Se Tha

Mein Kharabon Ka Makeen  Aur Ta’alluq Mera
Tery Naate Kabhi Khawaboon K Mehlaat Se Tha

Lab Kushaie Par Khula Usk Sukhan Ka Ikhlaas
Kitna Aarasta Woh Atlaas Wa Banaat Se Tha....





Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

  1. Judai, Visaal, firaaq, Zeest, Hijr, Gham, Dukh, Dhoka SMS Poetry

    ReplyDelete

Thanks For Nice Comments.