Wednesday, 20 March 2013

Pin It

Widgets

Rootha Tou Shehr-e-Khuwab Ko..




Shayad Usay Azeez Thi
             
    روٹھا تو شہر خواب کو غارت بھی کر گیا
    پھر مسکرا کے تازہ شرارت بھی کر گیا

    شاید اسے عزیز تھیں آنکھیں میری بہت
    وہ میرے نام اپنی بصارت بھی کر گیا

    منھ زور آندھیوں کی ہتھیلی پہ اک چراغ
    پیدا میرے لہو میں حرارت بھی کر گیا

    بوسیدہ بادبان کا ٹکڑا ہوا کے ساتھ
    طوفاں میں کشتیوں کی سفارش بھی کر گیا

    دل کا نگر اجاڑنے والا ہنر شناس
    تعمیر حوصلوں کی عمارت بھی کر گیا

    سب اہل شہر جس پہ اٹھاتے تھی انگلیاں
    وہ شہر بھر کو وجہ زیارت بھی کر گیا

    محسن یہ دل کہ اس بچھڑتا نہ تھا کبھی
    آج اس کو بھولنے کی جسارت بھی کر گیا


Rootha Tou Shehr-e-Khuwab Ko Gharat Bhi Kar Gaya
Phir Muskara K Taaza Shararat Bhi Kar Gaya ,

Shayad Usay Azeez Thi Aankhen Meri Bohat
Wo Meray Naam Apni Basaa'rat Bhi Kar Gaya,

Moun-Zoor Aandhiyon Ki Hatheli Pay Ek Charagh
Paida Meray Lahoo Men Hara'rat Bhi Kar Gaya,

Boseeda Baad'baan Ka Tukra Hawa K Saath
Toofaan Men Kashtiyon Ki Sifarish Bhi Kar Gaya,

Dil Ka Nagar Ujaarney Wala Hunar Shanaas
Tameer Hosloon Ki Imaarat Bhi Kar Gaya,

Sab Ehl-e-Shaher Jis Par Uthatay Thay Ungliyaan
Woh Shehar Bhar Ko Wajah-e-Ziyarat Bhi De Gaya

Mohsin Ye Dil K Us Say Bichartha Na Tha Kabhi
Aaaj Usko Bholney Ki Jisaarat Bhi Kar Gaya…….




Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

2 comments:

Thanks For Nice Comments.