Wednesday, 20 March 2013

Pin It

Widgets

Teri Yaadon Se Kaheen Door Nikal Kar Dekhen



Ishq Ki Aag
تیری یادوں سے کہیں دور نکل کر دیکھیں
گویا تپتے ہوئے صحرا میں بھی چل کر دیکھیں

عشق کی آگ میں جل کر یہ کہاں جاتے ہیں
ہم بھی پروانوں سا شمع پہ مچل کر دیکھیں

گرنے والے بھی یہ کہتے ہیں نشانہ بن کر
آؤ پھر سے بتِ کافر کو سنبھل کر دیکھیں

جب سے وہ شخص چلا پیار میں ہے ساتھ مرے
لوگ جتنے بھی مجھے دیکھیں سبھی جل کر دیکھیں

ہاں کریں عہدِ وفا اور بدل جائیں پھر
ہم بھی دنیا کے مزاجوں میں ہی ڈھل کر دیکھیں

آج ہاتھوں کو جلایا کہ ہے ارمان یہ اب
ہم بھی قسمت کی لکیروں کو بدل کر دیکھیں

 Teri Yaadon Se Kaheen Door Nikal Kar Dekhen
Goya Taptay Huey Sehra Men Bhi Chal Kar dekhen

Ishq Ki Aag Men Jal Kar Yeh Kahan Jatey Hen
Hum Bhi Parwano Sa Shamma Pe Machal Kar Dekhen

Girne Walay Bhi yeh Kehte Hen Nishana Ban Kar
Aao Phir Se But-e-Kafir Ko Sanbhal Kar Dekhen

Jab Se Who Shakhs Chala Piyar Men Hai Sath Mere
Log jitney Bhi Mujhe Dekhen , Sabhi Jal Kar Dekhen

Haan Karen Ehd-e-Wafa Aur Badal Jaen Phir
Hum Bhi Dunya K Mijzon Men He dhal Kar Dekhen

Aaj Hathon Ko Jalaya K Hai Armaan Bohat
Hum Bhi Qismat Ki Lakeeron Ko Badal Kar Dekhen..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.