Saturday, 2 March 2013

Pin It

Widgets

Umeed K Sehra Men Jo Barson Se Khara Hay



Umeed K Sehra

اُمید کے صحرا میں جو برسوں سے کھڑا ہے
حالات کی بے رحم ہواؤں سے لڑا ہے

رُسوائی سے بھاگے تو یہ محسوس ہوا ہے
تنہائی کی منزل کا سفر کتنا کڑا ہے

ہیرے کی کنی ہو تو تبسم بھی بہت ہے
لو سامنے اک کانچ کا مینار کھڑا ہے

یوں ذہن پہ برسا ہے تری یاد کا بادل
جیسے کہ کوئی کوہِ الم ٹوٹ پڑا ہے

گزرے ہوئے لمحے کبھی واپس نہیں آتے
کیوں صورتِ دیوار اندھیرے میں کھڑا ہے

اک وجہہ مبہم ہوں بظاہر میں اُفق پر
کہتے ہیں مرا نام مرے قد سے بڑا ہے

اک میں ہی اکیلا نہیں اس دشتِ خلش میں
جلتا ہوا سورج بھی مرے سر پہ کھڑا ہے

ناقدریٔ جذبات کے اس عہد میں
آ جائے اگر راس تو پتھر بھی بڑا ہے



Umeed K Sehra Men Jo Barson Se Khara Hay
Halaat Ki Be Reham Hawaon Se Larra Hay

Ruswaee Se Bhagay Tou Yeh Mehsoos Hua Hay
Tanhai Ki Manzil Ka Safar Kitna Karra Hay

Heeray Ki Kani Ho Tou, Tabasum Bhi Bohat Hay
Lo Samne Ik Kaanch Ka Minaar Kharra Hay

Yun Zehan Pe Barsa Hay Teri Yaad Ka Badal
Jese K Koi Koh-e-Alam Toot Parra Hay

Guzre Huey Lamhe Kabhi Wapas Nahi Aatay
Kiun Soorat-e-Diwaar Andhere Men Kharra Hay

Ik Wajh-e-Mubhim Hoon Bazahir Men Ufaq Par
Kehte Hen Mera Naam, Mere Qad Se Barra Hay

Ik Men He Akela Nahi Is Dast-e-Khalish Men
Jalta Hua Sooraj Bhi Mere Sar Pe Kharra Hay

Na Qadriy-e-Jazbaat K, Is Ehad Men
Ajaey  Agar Raas Tou, Pathar Bhi Barra Hay….


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.