Friday, 22 March 2013

Pin It

Widgets

Woh Kahani Ko Mukammal Nahi Hone Deta...

Khud Ko Kirdaar

  
خود کو کردار سے اوجھل نہیں ہونے دیتا
وہ کہانی کو مکمل نہیں ہونے دیتا

سنگ بھی پھینکتا رہتا ہے کہیں ساحل سے
اور پانی میں بھی ہلچل نہیں ہونے دیتا

کاسہء خواب سے تعبیر اُٹھا لیتا ہے
پھر بھی آبادی کو جنگل نہیں ہونے دیتا

دھوپ میں چھاؤں بھی رکھتا ہے سروں پر ، لیکن
آسماں پر کہیں بادل نہیں ہونے دیتا

ابر بھی بھیجتا رہتا ہے سدا بستی میں
گلی کوچوں میں بھی جل تھل نہیں ہونے دیتا

روز اک لہر اُٹھا لاتا ہے بے خوابی کی
اور پلکوں کو بھی بوجھل نہیں ہونے دیتا

پھول ہی پھول کھلاتا ہے سرِ شاخِ وُجود
اور خوشبو کو مسلسل نہیں ہونے دیتا

عالمِ ذات میں درویش بنا دیتا ہے
عشق انسان کو پاگل نہیں ہونے دیتا


Khud Ko Kirdaar Se Ojhal Nahi Hone Deta
Woh Kahani Ko Mukammal Nahi Hone Deta

Sang Bhi Phainkta rehta Hai Kaheen Saahil Se
Aur Pani Men Bhi Halchal Nahi Hone Deta

Kasa-e-Khuwaab Se tabeer Utha Leta Hai
Phir Bhi Aabadi Ko Jungle Nahi Hone Deta

Dhoop Men Chaa’on Bhi Rakhta Hai Saron Par Lekin
Aasmaan Par Kaheen Badal Nahi Hone Deta

Abr Bhi Bhaijta Rehta Hai Sada Basti Men
Gali Koochon Men Bhi Jal Thal Nahi Hone Deta

Roz Ik Lehar utha Lata Hai Be-Khuwabi Ki
Aur Palkon Ko Bhi Bojhal Nahi Hone Deta

Phool He Phool Khilata Hai Sar-e-Shaakh Wajood
Aur Khushboo Ko Musalsal Nahi Hone Deta

Aalam-e-Zaat Men Darwaish Bana Deta Hai
Ishq Insaan Ko Pagal Nahi Hone Deta………


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.