Tuesday, 23 April 2013

Pin It

Widgets

Khushbuon Se Kalaam Mat Karna...


خوشبوؤں سے کلام مت کرنا
شہر میں دیکھ شام مت کرنا

تتلیاں، پھول، خو اب، خوشبو تم
اب کبٍھی میرے نام مت کرنا

اپنے آنچل میں رنگ سب بھرنا
رنگ یکساں تمام مت کرنا

فون پر تم ملے ہو مشکل سے
گفتگو کو تمام مت کرنا

آنسوؤں کی شفق ہے آنکھوں میں
کہہ کے لوگوں میں عام مت کرنا

میرے اعزاز میں کسی کے گھر
شام کا اہتمام مت کرنا

حرمتِ دل کا جو نہ ہو قائل
اس کے گھر میں قیام مت کرنا

شیشۂ دل پہ جو گریں پتھر
ان کا تم احترام مت کرنا

لڑکھڑا جائے گی زباں نیناں
اس سے ہرگز کلام مت کرنا


Khushbuon Se Kalaam Mat Karna
Shehar Men Dekh Shaam Mat Karna

Titliyaan, Phool, Khuwab, Khushbu Tum
Ab  Kabhi  Mere  Naam  Mat  Karna

Apne Aanchal Men Rung Sab Bharna
Rung  Yaksaan  Tamaam  Mat  Karna

Phone Par Tum Mile Ho Mushkil Se
Ghuftugoo  Ko  Tamaam Mat Karna

Aansuon Ki Shafaq Hai Aankhon Men
Keh  K  Logon Men  Aam  Mat  Karna

Mere Aizaaz  Men  Kisi  K  Ghar
Shaam Ka Ehtamaam Mat Karna

Hurmat-e-Dil  Ka  Jo  Na  Ho  Qayal
Usk  Ghar Men Qayaam Mat Karna

Sheesha-e-Dil Pe Jo Giren Pathar
In  Ka Tum  Ehtaraam  Mat  Karna

Larkharra Jaey Gi Zubaan Naina
Us Se  Hargiz Kalaam Mat Karna…


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It



Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.