Friday, 10 May 2013

Pin It

Widgets

Jagein Gay Kisi Roz Tou Is Khuwab-e-Tarab Se


Phool He Chunte

جاگیں گے کسی روز تو اس خوابِ طرب سے
ہم پُھول ہی چُنتے رہے باغیچۂ شب سے

پھر ایک سفر اور وہی حرفِ رفاقت
سمجھے تھے گُزر آئے ہیں ہم تیری طلب سے

خُوش دل ہے اگر کوئی تو کیا اُس کا یہاں کام
یہ بارگہِ غم ہے، قدم رکھو ادب سے

اب موسمِ جاں سے بھی یقیں اُٹھنے لگا ہے
دیکھا ہے تُجھے رنگ بدلتے ہوئے جب سے

یاں بھی وہی بیگانہ روی، اپنے خُدا سی
مانگی جو کبھی کوئی دُعا شہر کے رب سے

چونکی ہوں تو دیکھا کہ وہ ہمراہ نہیں ہے
اُلجھن میں ہوں کس بات پہ، کس موڑ پہ، کب سے

یہ درخورِ ہنگامہ تو پہلے بھی کہاں تھی
ہول آئے مگر آج تو ویرانئ شب سے

کچھ، دوست بھی مصروف زیادہ ہوئے اور کچھ
ہم دور ہیں ، افسردگئ دل کے سبب سے

Jagein Gay Kisi Roz Tou Is Khuwab-e-Tarab Se
Hum Phool He Chunte Rahe, Bagicha-e-Shab Se

Phir Aik Safar Aur Wohi Harf-e-Rafaqat
Samjhay Thay Guzar Aaey Hum, Teri Talab Se

Khush Dil Hai Agar Koi Tou, Kia Uska Yahan Kaam
Yeh Bargah-e-Gham Hai, Qadam Rakho Adab Se

Ab Mosam-e-Jaan Se Bhi Yaqeen Uthne Laga Hai
Dekha Hai Tujhe Rung Badalte Huey Jab Se

Yaan Bhi Wohi Begana Ravi Apni Khuda Si
Mangi Jo Kabhi Koi Dua Shehar K Rab Se

Chonki Hon Tou Dekha K Woh Humraaz Nahi Hai
Uljhan Mein Hoon Kis Bat Pe Kis Morr Pe , Kab Se

Yeh Dakhor-e-Hungama Tou Pehle Bhi Kahan Thi
Hol Aaey Magar Aj Tou Viran-e-Shab Se

Kuch Dost Bhi Ziada Masrof Huey Or Kuch
Hum Door Hein, Afsurdagi-e-Dil K Sabab Se..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.