Thursday, 30 May 2013

Pin It

Widgets

Kia Kia Na Khuwaab Hijr K Mosam Mein Kho Gaey

Ab Khuwab Hogaie

کیا کیا نہ خواب ھِجر کے موسم میں کھو گئے
ھم جاگتے رھے تھے مگر بخت سو گئے

اُس نے پیام بھیجے تو رَستے میں رہ گئے
ھم نے جو خط لِکھے وہ ھوا بُرد ھو گئے

میں شہرِ گُل میں زخم کا چہرہ کِسے دکھاؤں
شبنم بدست لوگ تو کانٹے چَبھو گئے

آنچل میں پُھول لے کے کہاں جا رھی ھُوں میں
جو آنے والے لوگ تھے، وہ لوگ تو گئے

کیا جانیے، اُفق کے اُدھر کیا طلسم ھے
لَوٹے نہیں زمین پہ، اِک بار جو گئے

جیسے بدن سے قوسِ قزح پُھوٹنے لگی
بارش کے ھاتھ پُھول کے سب زخم دھو گئے

آنکھوں میں دِھیرے دِھیرے اُتر کے پُرانے غم
پلکوں میں ننھے ننھے ستارے پِرو گئے

وہ بچپنے کی نیند تو اب خواب ھو گئی
کیا عُمر تھی کہ رات ھُوئی اور سو گئے

کیا دُکھ تھے، کون جان سکے گا، نگارِ شب
جو میرے اور تیرے دوپٹے بِھگو گئے

Kia Kia Na Khuwab Hijr K Mosam Mein Kho Gaey
Hum Jagtey Rahe Thay, Magar Bakht So Gaey

Us Ne Payaam Bhaijey Tou Rastey Mein Reh Gaey
Hum Ne Jo Khat Likhey Woh Hawa Burd Ho Gaey

Mein Shehr-e-Gul Mein Zakhm Ka Chehra Kisay Dikhaon
Shabnam Badast Log Tou Kaantey Chubho Gaey

Aanchal Mein Phool Le K Kahan Ja Rahi Hoon Mein
Jo Aaney Walay Log Thay, Woh Log Tou Gaey

Kia Janiye Ufaq K Udhar  Kia Tilism Hai
Lotay Nahi Zameen Par Ik Baar Jo Gaey

Jese Badan Se Qoseh Qazah  Phootne Lagi
Barish K Hath Phool K Sab Zakhm Dho Gaey

Aankhon Mein Dheere Dheere Utar  K Purane Gham
Palkon Mein Nan’neh  Nan’neh Sitarey  Piro Gaey

Woh Bachpaney Ki Neend Tou Ab Khuwab Ho Gaie
Kia Umr Thi K Raat Hui Aur So Gaey

Kia Dukh Thay,  Kon Jan Sakay Ga , Nighar-e-Shab
Jo Mere Aur Tere Dupattay Bhigo Gaey,,,,,,,,,,...




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.