Monday, 27 May 2013

Pin It

Widgets

Kitab-e-Zeest K Har Baab K Unwaan Mein Tum Ho,,..........

Zindagi Ki Kitaab

کتابِ زیست کےہر باب کے عنوان میں تم ہو
ہے یہ تحریر سے ظاہر میرے وجدان میں تم ہو

اماوس ہے تیرا کاجل، جبیں ہے نور کا پرتو
چمن کی ہر کلی سے پھوٹتی مسکان میں تم ہو

کوئی اجڑا ہوا مندر، اٹی ہو گرد سے مورت
کچھ ایسے ہی میری جان اس دلِ ویران میں تم ہو

مجھے زندہ لیے پھرتا ہے یہ احساس کہ اب تک
تیری پہچان میں مَیں ہوں، میری پہچان میں تم ہو

میرے خوابو! اداسی ہے مری آنکھوں میں بعد ان کے
اگرچہ رت جگے مغوی ہیں، پر تاوان میں تم ہو

یہی کافی ہے بتلانا فقط اک دل ہے سینے میں
بہت ارمان ہیں دل میں، ہر اک ارمان میں تم ہو

تو کیا غم ہے جو حاوی ہو گیا ہے لشکرِ اعداء
تمہاری جیت ہے قیصرؔ ابھی میدان میں تم ہو


Kitab-e-Zeest K Har Baab K Unwaan Mein Tum Ho
Hai Yeh Tehree Se  Zahir Mere Wajdaan Mein Tum Ho

Amawas Hai Tera Kajal, Jabeen Hai Noor Ka Par Tu
Chaman Ki Har Kali Se Phoot’ti Muskaan Mein Tum Ho

Koi Ujrra Hua Mandir , Atti Ho Gard Se Moorat
Kuch Aise He Meri Jan Is Dil-e-Viran Mein Tum Ho

Mujhe Zinda Liyeh Phirta Hai Yeh Ehsas K Ab Tak
Teri Pehchan Mein, Mein Hoon, Meri Pehchan Mein Tum Ho

Mere Khuwabo Udasi Hai , Meri Ankhon Mein Bad Unk
Agr Chay Rat-Jagay Mugvi Hein, Par Tawaan Mein Tum Ho

Yehi Kafi Hai Batlana , faqat Ik Dil Hai Seenay Mein
Bohat Armaan Hein Dil Mein, Har Ik Arman Mein Tum Ho

Tu Kia Gham Hai, Jo Havi Hogaya Lashkar-e-Aada
Tumhari Jeet Hai Qaiser , Abhi Maidaan Mein Tum Ho..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.