Thursday, 2 May 2013

Pin It

Widgets

Pairr Ko Deemak Lag Jaey, Ya Aadam Zaad Ko Gham,,,,,,,,

Adam Zaad Ko Gham

پیڑ کو دیمک لگ جائے یا آدم زاد کو غم
دونوں ہی کو امجد ہم نے بچتے دیکھا کم

تاریکی کے ہاتھ پہ بیعت کرنے والوں کا
سُورج کی بس ایک کِرن سے گھُٹ جاتا ہے دَم

رنگوں کو کلیوں میں جینا کون سکھاتا ہے
شبنم کیسے رُکنا سیکھی! تِتلی کیسے رَم

آنکھوں میں یہ پَلنے والے خواب نہ بجھنے پائیں
دل کے چاند چراغ کی دیکھو، لَو نہ ہو مدّھم

ہنس پڑتا ہے بہت زیادہ غم میں بھی انساں
بہت خوشی سے بھی تو آنکھیں ہو جاتی ہیں نم

Pairr Ko Deemak Lag Jaey Ya, Aadam Zaad Ko Gham
Dono He Ko Amjad Hum Ne, Bachtay Dekha Kum

Tareeki  K Hath Pay, Beyat Karne Walon Ka
Sooraj Ki Bus Aik Kiran Se Ghut Jata Hai Dum

Rango Ko Kalyon Mein Jeena Kon Sikhata Hai
Shabnam Kese Rukna  Seekhi, Titli Kese Rum

Aankhon Mein Yeh Palnay Waley Khuwab Na Bujhne Paen
Dil K Chaand Charaag Ki Dekho, Lou Na Ho Madham

Hans Parta Hai Bohat Ziyada Gham Mein Bhi Insaan
Bohat Khushi Se Bhi Tou Aankhein Ho Jati Hein Num..


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.