Thursday, 16 May 2013

Pin It

Widgets

Phool Khushbu K Nashay He Main Bikhar Jatey Hein,,,,,

Log Pehchaan Banatey

پھول خوشبو کے نشے ہی میں بکھر جاتے ہیں
لوگ پہچان بناتے ہوئے مر جاتے ہیں

منزلیں اُن کا مُقدّر کہ طلب ہو جن کو
بے طلب لوگ تو منزل سے گُزر جاتے ہیں

جن کی آنکھوں میں ہوں آنسو، اُنہیں زندہ سمجھو
پانی مرتا ہے تو دریا بھی اُتر جاتے ہیں

لب خنداں ہوں، کہ ہوں اُن کی شگفتہ آنکھیں
ہم سمجھتے تھے کہ یہ زخم بھی بھر جاتے ہیں

   ہم ہیں سوکھے ہوئے تالاب پہ بیٹھے بیٹھے ہوئے ہنس
جو  تعلق  کو  نبھاتے  ہوئے  مر  جاتے  ہیں 

اے خدا  ایسی  اذیّت  سے بچانا  ہم  کو
جہاں دستار تو رہ جاتی ہے، سر جاتے ہیں


Phool Khusbu K Nashey He Mein Bikhar Jate Hein
Log Pehchaan Banatey Huey, Mar Jatey Hein

Manzilein Un Ka Muqaddar, K Talab Ho Jin Ko
Be-Talab Log Tou, Manzil Se Guzar Jate Hein

Jinki Aankhon Mein Hon Aansoo, Uneh Zinda Samjho
Pani Marta Hai Tou, Darya Bhi Utar Jatey Hein

Lab-E-Khandaan Hon K Unki Shagufta Aankhein
Hum Samjhte Thay K Yeh Zakhm Bhi Bhar Jatey Hein

Hum Hein Sookhay Huey Talaab Pe Bethe Huey Huns
Jo Ta’alluq Ko Nibhatey Huey Mar Jatey Hein

Ay Khuda Aisi Aziyat Se Bachana Hum Ko
Jahan Dastaar Tou Reh Jati Hai, Sar Jatey Hein,,,..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.